Code : 1554 204 Hit

بنی اسرائیل کے ایک گنہگار جوان کی توبہ

پروردگار!میں نے 20 برس تیری اطاعت و بندگی میں گذارے اور 20 برس تیری معصیت اور نافرمانی میں۔ اب اگر میں واپس آنا چاہوں اور توبہ کرلوں تو کیا تو مجھے قبول کرلے گا؟اسے ایک ندا آئی:جب تک تو ہم سے محبت کرتا تھا ہم بھی تجھے چاہتے تھے اور جب تو ہمیں چھوڑ کر چلا گیا ہم نے بھی تجھے چھوڑ دیا۔تونے ہماری نافرمانی کی ہم نے تجھے مہلت دی اور اگر تو ہماری طرف پلٹنا چاہے تو ہم تجھے قبول کرلیں گے۔چنانچہ اس شخص نے سچے دل سے توبہ کی اور پھر سے اللہ کے عبادت گذاروں میں اس کا شمار ہونے لگا۔

ولایت پورٹل: قوم بنی اسرائیل کا ایک جوان تھا جو ہمیشہ اللہ تعالٰی کی عبادت میں مشغول رہتا تھا۔جو دنوں میں روزے رکھتا اور اور راتوں کو نماز اور راز و نیاز کرتا تھا ۔مکمل 20 برس اس کا یہی شیوہ اور طریقہ تھا ۔لیکن ایک دن وہ شیطان کے بہکاوے میں آگیا اور عبادتیں چھوڑ دی اور آہستہ آہستہ نماز اور عبادت میں بسر ہونے والا اس کا وقت اب معصیت و گناہ میں گذرنے لگا اور اب وہ ایک گنہگار بن چکا تھا۔
اور پھر معصیت میں بھی اس کے 20 برس آناً فاناً گذر گئے چنانچہ ایک دن فرصت پاکر وہ شیشے کے سامنے آکر کھڑا ہوا تو اس نے دیکھا کہ اس کے بال تو سفید ہوگئے ہیں اور اس پر بڑھاپا چھاگیا ہے۔ اسے بہت افسوس ہوا کہ اس نے کس طرح اللہ کی عبادت کرتے کراتے اپنے کو گناہوں کی کھائی میں دھکیل دیا۔ غرض وہ بہت پشیمان ہوا اور اس نے اللہ کی بارگاہ میں عرض کیا: پروردگار!میں نے 20 برس تیری اطاعت و بندگی میں گذارے اور 20 برس تیری معصیت اور نافرمانی میں۔ اب اگر میں واپس آنا چاہوں اور توبہ کرلوں تو کیا تو مجھے قبول کرلے گا؟
اسے ایک ندا آئی:
جب تک تو ہم سے محبت کرتا تھا ہم بھی تجھے چاہتے تھے اور جب تو ہمیں چھوڑ کر چلا گیا ہم نے بھی تجھے چھوڑ دیا۔تونے ہماری نافرمانی کی ہم نے تجھے مہلت دی اور اگر تو ہماری طرف پلٹنا چاہے تو ہم تجھے قبول کرلیں گے۔چنانچہ اس شخص نے سچے دل سے توبہ کی اور پھر سے اللہ کے عبادت گذاروں میں اس کا شمار ہونے لگا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
منبع:
ثمراة الحيوة جلد۳ص نوشته۳۷۷


0
شیئر کیجئے:
फॉलो अस
नवीनतम