Code : 3371 12 Hit

جرمنی میں تقریبا 1800 تارکین وطن بچے لاپتہ ہیں:جرمن میڈیا

جرمنی کے ذرائع ابلاغ کا کہنا ہے کہ اس یورپی ملک میں تارکین وطن کے قریب 1800 بچوں اور نوعمروں کا کوئی پتا نہیں کہ وہ کہاں ہیں۔

ولایت پورٹل:جرمن خبر رساں ادارے فنک میڈینگرپ کے مطابق جرمنی میں تقریبا 1800 تارکین وطن بچے اور نوعمر لاپتہ ہیں جن کے بارے میں کوئی خبر نہیں کہ کہاں ہے اور ان کا کیا ہوا۔
جرمن میڈیا میں تارکین وطن بچوں اور نوعمروں کی گمشدگی سے متعلق رپورٹ کی اشاعت نے اس گمشدگی میں انسانی اسمگلنگ گروپوں کے ملوث ہونے کے امکانات پر تشویش پیدا کردی ہے۔
اس سے قبل ہیومن رائٹس واچ نے اپنی  ایک رپورٹ میں کہا تھا کہ حالیہ برسوں کے دوران یورپ میں امیگریشن کی بڑھتی ہوئی لہر دیکھنے میں آئی ہے  جس کے نتیجہ میں نومبر 2019 کے وسط تک ایک لاکھ سے زیادہ تارکین وطن یوروپی یونین کی سرحدوں پر پہنچے ہیں۔
واضح رہے کہ یوروپین گمشدہ بچوں کی فاؤنڈیشن  نے بچوں کے سلسلہ میں ایک سرگرم تنظیم کی حیثیت سے اس براعظم میں تارکین وطن بچوں اور نوعمروں کی حالت زار سے متنبہ کیا ہے۔
مذکورہ تنظیم کا کہنا ہے کہ تارکین وطن کا ایک نمایاں حصہ 18 سال سے کم عمر کے بچوں پر مبنی ہوتا ہے اور بدقسمتی سے حکومتیں اکثر ان تارکین وطن نابالغوں کی سرنوشت سے بے خبر ہوتی ہیں۔
فنکے میڈین گروپ کے جاری کردہ اعدادوشمار کے مطابق مارچ کے آخر (پچھلے مہینے) تک ، 1785 گمشدہ نوجوان تارکین وطن کے بارے میں کوئی بات سامنے نہیں آئی ہے۔
رپورٹ کے مطابق لاپتہ بچوں میں سے زیاتر کا تعلق افغانستان ، شام ، مراکش ، گیانا اور صومالیہ سے ہے۔
جرمن انسٹی ٹیوٹ برائے نوجوان تارکین وطن کے سینئر ممبر  ٹوبیاس کلائوس نے کہا ہمیں اس خطرناک صورتحال کے بارے میں بہت تشویش ہے جس کا ان لوگوں کو سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔






0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین