Code : 3124 66 Hit

٪ 65 فیصد یمنیوں کے پاس کھانے کو کچھ نہیں:بین الاقوامی ریڈ کراس کمیٹی

بین الاقوامی ریڈ کراس کمیٹی نے یمنی عوام کی حالت زار پر ایک چونکا دینے والے اعدادوشمار جاری کرتے ہوئے کہا ہے کہ یمن کے 80 فیصد لوگوں کو زندہ رہنے کے لئے مدد کی ضرورت ہے۔

ولایت پورٹل:النشرہ نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق بین الاقوامی ریڈ کراس  کمیٹی نے سعودی اتحاد  کی جارحیت  کی وجہ سے یمنی عوام کی حالت زار سے متعلق اعدادوشمار جاری کیے ہیں۔
اس کمیٹی نے ایک بیان جاری کیا ہے  جس میں کہا گیا ہے کہ یمن کی 80 فیصد آبادی کو صرف زندہ رہنے کے لئے مدد کی ضرورت ہے۔
مذکورہ بین الاقوامی تنظیم کے بیان میں مزید آیا ہے کہ ٪ 65 فیصد یمنی آبادی جس کی تعداد30 ملین سے زائد افراد ہے ، کے پاس کھانے کے لئے کچھ بھی نہیں ہے۔
بین الاقوامی ریڈ کراس  کمیٹی کا کہناہے کہ64% فیصد یمنیوں کی حفظان  صحت کے بنیادی اصولوں تک رسائی حاصل نہیں ہے نیز58%فیصد کو پینے کے لیے صاف پانی بھی میسرنہیں ہے۔
کمیٹی نے یہ بھی کہا ہے  کہ یمن کے خلاف جنگ نے 10فیصد یمنی قوم کو گھر بار چھوڑنے پر مجبور کیا ہے۔
بحرین میں سرگرم امریکی  تنظیم ڈیموکریسی اینڈ ہیومن رائٹس نے گذشتہ روز اسٹاک ہوم سویڈش معاہدے پر عمل درآمد  کرانے اور یمن جنگ میں شامل ممالک سعودی عرب ، متحدہ عرب امارات اور بحرین پر جنگ کے خاتمے کے لیے دباؤ ڈالنے کا مطالبہ کیا۔
اس تنظیم  نے ہائی کمشنر سے یمن میں ہونے والی انسانی حقوق کی پامالی اور جنگی جرائم کی آزاد بین الاقوامی تحقیقات کا بھی مطالبہ کیا۔
انسانی حقوق کی تنظیم کے بیان میں آیا ہے کہ صوبہ الحدیدہ کے بارے میں سویڈش معاہدے اور فوجی دستوں کو واپس بلانے نیز حملوں کو روکنے پر مبنی معاہدے کے باوجود سعودی اتحاد نے آج تک مذکورہ بالا کوئی عمل نہیں کیا اور الحدیدہ میں فضائی حملے جاری رکھے ہوئے ہے۔

0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین