امریکہ مخالف مظاہروں کے جرم میں یمنی عوام کو آل سعود کے عتاب کا سامنا

امریکہ مخالف مظاہروں کے بعد سعودی اتحاد کے لڑاکا طیاروں نے یمن کے مختلف علاقوں پر شدید بمباری کی۔

ولایت پورٹل:النشسرہ نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق سعودی اتحاد کے لڑاکا طیاروں نے یمن کے مختلف علاقوں پر بمباری کی،اسی سلسلے میں صوبہ الحدیدہ  میں واقع حبس شہر  کے المریرگاؤں میں سعودی اتحاد کی بمباری کے نتیجے میں عبداللہ شیریاننامی یمنی شہری کے گھر کو نشانہ بنایا گیا، جس کے نتیجے میں ماں کے پیٹ میں ایک بچہ اور ایک شخص ہلاک ہو گیاجبکہ بچے ماں بھی شدید زخمی ہو گئی۔
 صعدہ گورنری کے سرحدی قصبے منبہ میں الرقہ اور الشیخ کے علاقے بھی سعودی توپخانے کی گولہ باری کی زد میں آگئے جس میں چار یمنی شہری شدید زخمی ہوگئے،سعودی اتحاد کی جانب سے صوبہ مأرب کے شہر صرواح اور الجوبہ پر 24 گھنٹوں میں 30 بار بمباری کی گئی جبکہ سعودی فوجی اتحاد کی طرف سے الحدیدہ صوبے کے شہر حبس پر پانچ بار بمباری کی گئی اور صوبہ حجہ کے شہر حرض پر دو بار بمباری کی گئی۔
واضح رہے کہ  یہ حملے اس وقت ہوئے جب یمنی شہریوں نے صعدہ اور تعز، حجہ، عمران، البیضاء، ریمہ اور أب میں مظاہرے کیے، یہ مظاہرے امریکہ کے خلاف اس نعرے کے ساتھ کیے گئے کہ اقتصادی اور فوجی دباؤ نیز دشمنی کے جاری رہنے اور یمن کے محاصرے کے پیچھے واشنگٹن کا ہاتھ ہے۔
احتجاجی کمیٹی نے یمنی عوام سے مطالبہ کیا کہ وہ امریکی فوجی دباؤ کے خلاف مظاہرے میں شرکت کریں، اس سلسلے میں یمنی وزارت دفاع کے شعبہ رہنمائی کے نائب ڈائریکٹر عبداللہ بن عامر نے اعلان کیا کہ یہ شعبہ آنے والے دنوں میں یمن کی جنگ میں امریکہ کے کردار کو دستاویزی شکل دے گا، اس اقدام میں اسلحے کی سپلائی، لاجسٹک حمایت اور فضائی آپریشنز کے انتظام میں امریکی کردار کی دستاویز اور وہ تمام اقدامات شامل ہیں جو اس بات کی تصدیق کرتے ہیں کہ سعودی قیادت میں جارحانہ اتحاد امریکی ہے۔


0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین