یمنی تیل کمپنی کے کارکنوں کا اقوام متحدہ کے دفتر کے سامنے مظاہرہ

یمنی تیل کمپنی کے کارکنوں نے سعودی اتحاد کی جانب سے ٹینکروں کو قبضے میں لینے کی مذمت کرتے ہوئے صنعا میں اقوام متحدہ کے دفتر کے سامنے احتجاج کیا۔

ولایت پورٹل:المسیرہ نیوز ویب سائٹ کی رپورٹ کے مطابق یمنی تیل کمپنی کے کارکنوں نے سعودی اتحاد کی جانب سے ٹینکروں کو قبضے میں لینے کی مذمت کرتے ہوئے صنعا میں اقوام متحدہ کے دفتر کے سامنے احتجاج کرتے ہوئے  ایک بیان جاری کیا جس میں کہا گیا ہے کہ سعودی اتحاد کی جانب سے ٹینکروں کو مسلسل قبضے میں لینے سے عوام کی مشکلات میں اضافہ ہوا ہے۔
مظاہرین نے اقوام متحدہ سے فوری کارروائی اور جارح اتحاد کے ارکان پر یمنی تیل کے ٹینکروں کو یمن میں داخل ہونے کی اجازت دینے کا مطالبہ کیا،مظاہرین نے اقوام متحدہ اور سلامتی کونسل سے یہ بھی مطالبہ کیا کہ وہ یمن کے آئل ٹینکروں پر اتحاد کی طرف سے قبضے کے نتیجے میں آنے والے انسانی بحران کو روکنے کے لیے اپنا کردار ادا کرے۔
درایں اثناصنعا میونسپلٹی کے ثقافتی ڈائریکٹر عبدالرحمن المناری نے بھی ریلی کی اہمیت پر زور دیتے ہوئے کہا کہ دنیا کو یہ پیغام دیا جائے کہ امریکی حمایت یافتہ جارح اتحاد عوام پر دباؤ ڈالنا چاہتا ہے،المناری نے یمنی آئل ٹینکروں پر قبضے میں سعودی اتحاد کے من مانی اقدامات اور بحری قزاقی کی شدید مذمت کی اور یمن کے محاصرے کے نتیجے میں شہریوں کے مصائب میں اضافے اور تباہ کن نتائج کا ذکر کیا۔
یمنی عہدہ دار نے اقوام متحدہ پر اس ملک کے شہریوں کے لیے خدمت کے شعبے کی امداد بند کرنے کے ساتھ ساتھ مختلف بیماریاں اور بیماریاں پھیلانے اور اپنے ملک میں انسانی صورتحال کو نازک بنانے کا بھی الزام لگایا۔

0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین