Code : 4630 10 Hit

امام رضا(ع) کو رضا کیوں کہا جاتا ہے؟

امام محمد تقی(ع) نے فرمایا:کیونکہ آپ کے دشمن اور مخالف بھی آپ سے اسی طرح راضی تھے جیسے آپ کے دوست اور موافق آپ سے راضی تھے، اور یہ کیفیت آپ کے آباء و اجداد(ع) میں سے کسی کے لئے نہیں تھی تو اسی لئے ان میں سے آپ(ع) "رضا" کہلائے گئے۔

ولایت پورٹل: جس طرح ہر دور میں اہل بیت اطہار(ع) سے عشق کرنے والے اور ان ذوات کی محبت و ولایت کا دم بھرنے والے رہے ہیں ویسے ہی ہر زمانے میں ان کے ساتھ دشمن کرنے والے لوگ بھی کافی تعداد میں موجود رہے ہیں۔اگرچہ ان کی محبت کا اللہ نے قرآن مجید میں امت سے مطالبہ کیا ہے اور رسول اللہ(ص) نے متعدد احادیث میں ان ذوات کی محبت و ولایت کی تأکید فرمائی ہے لیکن ان سے دشمنی و عداوت رکھنے والے کچھ غلط افواہوں اور خرافات و تعصب کی بنا پر ان سے عداوت کی سخت مصیبت میں گرفتار ملوث ہوجاتے ہیں اور وہ خود دانستہ طور پر ان سے عداوت نہیں کرتے بلکہ اس میں ظالم حکومتوں اور جابر صفت لوگوں کا خصوصی کردار ہوتا ہے چونکہ اہل بیت(ع) اللہ کے بتائے اصول کے پابند ہیں ان کی سیرت اور تعلیم یہ ہے کہ ظالم سے نفرت و بیزاری کرو چاہے وہ کوئی بھی ہو اور مظلوم کی حمایت کرو چاہے وہ کہیں کا رہنے والا ہو۔ یہی وہ چیز ہے جس کے سبب حکومتیں اور ارباب اقتدار ان ذوات کو اپنا دشمن سمجھتے ہیں اور ان کے خلاف لوگوں میں غلط افواہیں پھیلاتے ہیں اور پروپیگنڈا کرتے ہیں اور پھر بعد والی نسلوں کے لئے یہی مصیبت بن جاتی ہے چنانچہ انہیں غلط افواہوں میں سے جو اہل بیت(ع) کی دشمنی کا سبب بنی یہ تھی جس کے بارے میں بزنطی کا کہنا ہے کہ میں نے حضرت امام محمد تقی علیہ السلام  سے عرض کیا: آپ اہل بیت (ع) کے مخالفین میں سے کچھ لوگ سمجھتے ہیں کہ آپ (ع) کے والد گرامی کا نام ’’رضا‘‘ مامون نے رکھا۔ کیونکہ وہ آنحضرت (ع) کے لئے اپنی ولیعہدی پر راضی ہوا (پسند کیا)۔ حضرت امام محمد تقی (علیہ السلام) نے فرمایا: اللہ کی قسم، انہوں نے جھوٹ بولا اور فسق  کیا، بلکہ اللہ تبارک و تعالی نے آپ (ع) کا نام "رضا" رکھا، کیونکہ آپ, اللہ عزوجل (کی خدائی پر) اس کے آسمان میں راضی تھے اور اس کے رسول(ص) اور رسول کے بعد والے ائمہ (صلوات اللہ علیہم) پر اس کی زمین میں راضی تھے۔ بزنطی کا کہنا ہے کہ میں نے عرض کیا: کیا آپ(ع)کے ہر ایک سابقہ آباء و اجداد (علیہم السلام)، اللہ تعالی اور اس کے رسول اور ائمہ(ع) پر راضی نہیں تھے؟ حضرت نے فرمایا: ہاں کیوں نہیں! میں نے عرض کیا: تو اُن میں سے آپ کے باپ کو "رضا" کیوں کہا گیا؟ حضرت نے فرمایا: کیونکہ آپ کے دشمن اور مخالف بھی آپ سے اسی طرح راضی تھے جیسے آپ کے دوست اور موافق آپ سے راضی تھے، اور یہ کیفیت آپ کے آباء و اجداد(ع) میں سے کسی کے لئے نہیں تھی تو اسی لئے ان میں سے آپ(ع) "رضا" کہلائے گئے۔(عیون اخبار الرضا علیہ السلام، ج۱، ص۱۳)



1
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین