وائٹ ہاؤس کی محافظ فوج بھی حملہ کر سکتی ہے؛امریکی سکیورٹی عہدہ داروں کو تشویش

امریکہ میں جیسے جیسے اس ملک کے نومنتخب صدر کی حلف برداری کی تقریب کا وقت قریب آ رہا ہے  امریکی دفاعی عہدیداروں کو تشویش لاحق ہے کہ اس تقریب کو محفوظ بنانے کی ذمہ دار ان کی اپنی افواج کی طرف سے حملے یا دیگر خطرات لاحق ہو سکتے ہیں ۔

ولایت پورٹل:ایسوسی ایٹڈ پریس کی رپورٹ کے مطابق امریکی صدر جو بائیڈن کی حلف برداری کی تقریب کے موقع پر ، امریکی دفاعی عہدیداروں نے کہا ہے کہ انہیں اس بات پر تشویش ہے کہ حلف برداری کی تقریب کو محفوظ بنانے میں ان کی اپنی افواج کی طرف سے حملے یا دیگر خطرات لاحق  ہو سکتےہیں  لہذا ایف بی آئی حلف برداری کی تقریب کے لئے واشنگٹن ڈی سی آنے والے نیشنل گارڈ کے تمام 25 ہزار دستوں کے بارے میں تحقیقات کررہی ہے، امریکی وزیر دفاع ریان مک کارتی نے اتوار کے روز ایسوسی ایٹڈ پریس کو بتایا کہ وہ ممکنہ خطرات سے آگاہ ہیں اور حلف برداری کی تقریب  کے دورانفوجی کمانڈروں کو اپنے فوجی اکائیوں میں کسی بھی قسم کی پریشانی سے چوکس رہنے کی ہدایت کی ہے۔
واضح رہے کہ رپورٹ کے مطابق باوجود اس کے کہ اب تک امریکی فوج کی جانب سے حلف برداری کی تقریب کے لئے کسی قسم کے خطرے کا کوئی ثبوت موجود نہیں ہے ،تاہم نیشنل گارڈ کے ممبروں کی نگرانی میں تیزی سے اضافہ ہوا ہے، میک کارتی نے ایک خصوصی انٹرویو میں ایسوسی ایٹڈ پریس کو بتایا کہ ہم اس صورتحال کا مسلسل جائزہ لے رہے ہیں اور احتیاط سے ان لوگوں کی نگرانی کر رہے ہیں جنھیں حفاظت کے لئے مقرر کیا گیا ہے،یادرہے کہ رپورٹ کے مطابق امریکی صدر کی حلف برداری کی تقریب کو محفوظ بنانے کے لئے 25000 امریکی نیشنل گارڈ کے دستے واشنگٹن ڈی سی میں تعینات کردیئے گئے ہیں ۔




0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین