Code : 3745 4 Hit

مغربی پٹی کو الحاق کرنے کے منصوبہ سے علاقائی تنازعات بھرک اٹھیں گے:اقوام متحدہ کا انتباہ

اقوام متحدہ کے عہدیدار نے متنبہ کیا کہ صہیونی حکومت کے مغربی کنارے کے 30 فیصدحصہ پر قبضہ کرنے کا منصوبہ خطے میں تنازعات اور فلسطینیوں کے تشدد کی طرف جانے کا سبب بنے گا۔

ولایت پورٹل:عروٹص شوع ویب سائٹ کی رپورٹ کے مطابق صہیونی حکومت کے مغربی کنارے میں فلسطینی علاقوں کے بڑے حصوں پر قبضہ کرنے کے منصوبے کے خلاف عالمی مؤقف کے بعد ، اس بار مغربی ایشیاء کے لئے اقوام متحدہ کے خصوصی کوآرڈینیٹر نیکولائی ملڈینوف نے نتائج سے خبردار کیا۔
مالڈینوف نے جمعرات کی شام مقبوضہ بیت المقدس میں صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے ، کہا کہ اس طرح کا اقدام علاقائی تنازعات اور تشدد کا باعث بن سکتا ہے۔
اسی مناسبت سے انہوں نے متنبہ کیا کہ اس طرح کا اقدام صہیونی حکومت کے ساتھ فلسطینی اتھارٹی کے تعلقات کو ناقابل تلافی نقصان پہنچا سکتا ہے اور فلسطینیوں کو انتہا پسندی کی طرف لے جاسکتا ہے۔
اقوام متحدہ کے عہدیدار نے کہا کہ اگر فلسطینیوں کو لگا کہ ان کے پاس تنازعہ کے پرامن حل کی کوئی راستہ نہیں بچا ہے تو اس سے صرف انتہا پسندوں کے لئے مواقع پیدا ہوں گے۔
یادرہے کہ ملاڈینوف نے اس سے قبل فلسطینیوں اور اسرائیلی فریقین کو یکطرفہ اقدامات کرنے سے متنبہ کیا تھا جو تنازعہ اور فلسطینی اتھارٹی کی معیشت کے خاتمے کا سبب بن سکتا ہے۔
واضح رہے کہ صیہونی حکومت  امریکہ کی مدد سے یروشلم کواس غیر قانونی حکومت کا دارالحکومت تسلیم کرنے اور امریکی  سفارت خانے کو تل ابیب سے یروشلم منتقل کرنے کے بعداب ٹرمپ انتظامیہ کے تعاون سے مغربی کنارے کے 30٪ حصے پرسرکاری طور پر قبضے کا ارادہ رکھتی ہے۔
فلسطینی عہدیدار اور گروپ اس اقدام کو فلسطین مخالف امریکی  سینچری ڈیل نامی منصوبے کے ایک حصے کے طور پر دیکھ رہے ہیں۔
یہی وجہ ہے کہ فلسطینی امریکہ اور اسرائیل کے ساتھ تعلقات منقطع کرنا چاہتے ہیں۔
ادھر فلسطینی اتھارٹی کے حکام نے رواں ہفتے تل ابیب اور واشنگٹن کے ساتھ سلامتی اور انٹلیجنس تعاون معطل کردیا ہے۔
 


0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین