Code : 2422 45 Hit

ہم شامی کردملیشیا کی ہم مدد کررہے ہیں؛ صہیونیوں اعتراف

صہیونی ڈپٹی وزیر خارجہ نے کہا ہے کہ ہم شام کے کرد ملیشیا کی حمایت کرتے آئے ہیں۔

ولایت پورٹل:صہیونی اخبار جزور الم پوسٹ نے صہیونی ڈپٹی وزیر خارجہ زیپی ہو ٹولی کا حوالہ دیتے ہوئے لکھا ہے کہ صہیونی حکام شام کی کرد ملیشیا کی ہر ممکن مدد کرتے آئے ہیں ،زیپی  نے تفصیلات بتانے سے یہ کہتے ہوئے انکار کر دیا کہ اگر ہم ایسا کریں گے تو ہمیں مزید مدد کرنے میں مشکل پیش آسکتی ہے ، انہوں نے کہا کہ ملیشیا کی طرف سے ہم  سےسفارتی اور انسان دوستانہ مدد کرنے کی کئی بار اپیل کی جس کے بعد ہم مختلف میدانوں میں ان کی مدد کر رہے ہیں ،ادھر شامی فوج کا کہنا ہے کہ انھوں نے  شام میں سرگرم دہشتگردوں کے خفیہ ٹھکانوں اسرائلی ساخت کے متعدد اسلحہ کے گودام  برآمد کیے ہیں، حالیہ دنوں میں شام کے حالات کے بارے میں صہیونی حکام کے خوف و ہراس کی متعدد رپورٹیں بھی منظر عام پر آچکی ہیں ہیں، صیہونی حکام کامزید کہنا ہے امریکی حکومت کی جانب سے شام سے فوجی انخلا کے فیصلے کو لے کے ہم   کافی الجھن کا شکار ہیں کیونکہ حکومت کے اس فیصلے کے بعد ایران کو شام میں مزید آزادی مل جائے گی اور وہ اپنے اتحادیوں سے ملکر امریکہ اور اسرائیل کے خلاف وسیع پیمانے پر کاروائیاں کرسکتا ہے،صہیونی ریڈیو نے اپنی ایک رپورٹ میں کہا ہے کہ  تل ابیب حکام اس بات کو لے کر پریشان ہیں کہ ایران اسرائیل کی جانب سے شام میں شام اور عراق میں اس کے اتحادیوں پر ہونے والے حملوں کے جواب میں جوابی کارروائی کرتے ہوئے اسرائیل پر میزائل گرا سکتا ہے،بعض صہیونی ذرائع ابلاغ نے نامعلوم ذرائع کا حوالہ دیتے ہوئے  لکھا ہے کہ اسرائیل کروز میزائلوں کا مقابلہ  کرنے کی کوشش میں جٹا ہوا ہے،رپورٹ کے مطابق کروز میزائلوں کی پہچان بالسٹک میزائل سے زیادہ سخت ہے ،اس رپورٹ میں مزید آیا ہے کہ صیہونی حکام  ایران کی جانب سے عراق سے شام تک راہداری بنانے کیکی کوشش کرنے کو لے کر سخت پریشان ہیں اور  اب جبکہ امریکہ بھی اپنی فوجی شام سے نکال رہا ہے ہے کہ شمالی اسرائیل تک پہنچنے میں ایران کو ذرا   دیر بھی نہیں لگے گی،بعض صہیونی تجزیہ نگاروں کا کہنا ہے کہ امریکہ کے اس فیصلے سے کچھ بدلنے والا نہیں اس لیے کہ ایران امریکی فوج کے شام میں موجود ہوتے ہوئے بھی عراق سے شام تک راہداری بنا چکا ہے ،تاہم ٹرمپ کے اس فیصلے سے مشرق وسطی کے سلسلے میں امریکہ کا موقف مزید کمزور ضرور ہو جائے اور اسرائیل جو امریکہ ہی کے بل بوتے پر اچھل رہا ہے ،امریکہ کے کمزور ہونے سے وہ بھی کمزور ہوجائے گا ، یاد رہے کہ ٹرمپ نے حالیہ دنوں میں شام سے امریکی فوجیوں کو نکالنے کے سلسلے میں اپنی سیاست کی وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ اردن اور اسرائیل نے مجھ سے کہا ہے کہ کچھ فوج شام میں باقی رکھو ں۔

0
شیئر کیجئے:
फॉलो अस
नवीनतम