ہم ترکی اور شام کے درمیان تعلقات کی بحالی نہیں چاہتے:امریکی سفیر

ترکی میں امریکی سفیر نے ترکی اور شام کے تعلقات کو معمول پر لانے کے عمل کے بارے میں کہا کہ اس سلسلے میں میں آپ کو ترک حکام سے رابطہ کریں لیکن امریکہ دمشق سے رابطہ کرنے اور اس کے ساتھ تعلقات کو معمول پر لانے کے خلاف ہے۔

ولایت پورٹل:ترکی میں امریکی سفیر جیف فلیک نے واشنگٹن میں ترکی اور امریکی وزرائے خارجہ کی ملاقات کا حوالہ دیتے ہوئے ایک بیان میں کہا کہ بلنکن نے اناج راہداری کے سلسلہ میں معاہدے پر چاوش اوغلو اور ترکی کا شکریہ ادا کیا اور فریقین نے F-16 لڑاکا طیاروں کی فروخت، روس اور یوکرین کے درمیان جنگ اور نیٹو کے بارے میں بھی تبادلہ خیال کیا۔
فلک نے نیٹو میں فن لینڈ اور سویڈن کی رکنیت کے ساتھ ترکی کو لڑاکا طیاروں کی فروخت کی امریکی کانگریس کی مخالفت کے اثرات کے بارے میں مزید کہا کہ یہ دونوں معاملے ایک دوسرے سے متعلق نہیں ہیں جس کی وضاحت Blinken نے کر دی تھی۔
 انہوں نے سینیٹر باب مینینڈیز کی ترکی کو لڑاکا طیاروں کی فروخت کی مخالفت کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ میں نے مینینڈیز کے ساتھ ایوان نمائندگان اور سینیٹ میں کام کیا ہے، انہیں اس بارے میں شدید تحفظات ہیں لیکن ان کا سویڈن اور فن لینڈ سے کوئی تعلق نہیں ہے لیکن میں یہ ضرور کہوں گا کہ سویڈن اور فن لینڈ کی نیٹو میں شمولیت کی عالمی خواہش ہے اور کانگریس میں بھی ایسا ہی ہے۔
 امریکی سفیر نے ترکی کو لڑاکا طیاروں کی فروخت کے لیے بائیڈن انتظامیہ کی حمایت کی طرف اشارہ کرتے ہوئے مزید کہا کہ کانگریس ایک آزاد قانون ساز ادارہ ہے، اس ادارے کو اسلحے کی فروخت کی منظوری دینی چاہیے، اس لیے حکومت یہ نہیں کہہ سکتی کہ یہ کام ہم خود کر رہے ہیں لیکن بائیڈن انتظامیہ اس معاہدے کے پیچھے ہے اور اس سلسلے میں کانگریس کے ساتھ مل کر کام کر رہی ہے۔
 فلک نے ترکی اور شام کے تعلقات کو معمول پر لانے کے عمل کے بارے میں بھی کہا کہ اس سلسلے میں میں آپ کو ترک حکام کی طرف رجوع کرنا ہو گا، تاہم امریکہ دمشق سے رابطہ کرنے اور اس کے ساتھ تعلقات کو معمول پر لانے کے خلاف ہے، انہوں نے کہا کہ ترکی داعش کے خلاف جنگ میں اہم شراکت دار ہے، اگرچہ ہماری آراء مختلف ہیں اور دونوں فریق ایک دوسرے کے لیے ان اختلافات کی نشاندہی کرتے ہیں لیکن ہماری مفید گفتگو ہوتی ہے۔

0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین