امریکہ نے عالمی فوجداری عدالت پر پابندی عائد کرکے ثابت کردیا کہ عالمی برادری کی اس کے نزدیک کوئی حیثیت نہیں:جہاد اسلامی

فلسطینی جہاد اسلامی تحریک کے ایک سینئر ممبر نے بین الاقوامی فوجداری عدالت کے عہدیداروں کا بائیکاٹ کرنے کے امریکی اقدام کو فلسطینی عوام اور اسلامی ممالک کے خلاف تل ابیب کے جرائم پر پردہ پوشی قرار دیا ہے۔

ولایت پورٹل:فلسطینی جہاد اسلامی تحریک کے پولیٹیکل بیورو کے رکن  یوسف الحساینہ نے بین الاقوامی فوجداری عدالت کے عہدیداروں کا بائیکاٹ کرنے کے صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے اقدام کے جواب میں  کہا کہ یہ اقدام فلسطینیوں کے خلاف تل ابیب کے جرائم پر پردہ ڈالنا ہے۔
واضح رہے کہ جہاد اسلامی کی جانب سے یہ رد عمل یہ ٹرمپ کے جمعرات کو بین الاقوامی فوجداری عدالت کے خلاف پابندیوں کے عائد کیےجانے کے  ایک انتظامی حکم پر دستخط کرنے کے بعد سامنے آیا ہے۔
جہاد کے رکن نے کہا کہ ڈونلڈ ٹرمپ کا یہ اقدام اقوام متحدہ کے قوانین اور چارٹروں کی خلاف ورزی جاری رکھنے کے لئے صیہونی حکومت کی حمایت میں ہے۔
الحساینه نے یہ بھی کہا کہ امریکہ نے فلسطینی عوام اور دیگر عرب اور اسلامی اقوام کے خلاف مزید جرائم کے ارتکاب کے لئے صیہونی حکومت کو کھلی چھوٹ دے رکھی ہے اور اس کی پشت پناہی بھی کررہا ہے۔
یوسف الحسینیہ نے مزید کہا کہ ٹرمپ انتظامیہ ، بین الاقوامی فوجداری عدالت اور مظلوموں کی حمایت کرنے والی تمام تنظیموں کے خلاف اپنے مخالفانہ موقف کے ساتھ  اس بات کو ثابت کرتی ہے کہ عالمی برادری اور دنیا کے عوام کو اس کی کوئی پرواہ نہیں ہے۔
انہوں نے زور دے کر کہا کہ امریکی اور صہیونی حکومت کے مخالفانہ اقدامات پر ردعمل ظاہر کرنے میں عالمی برادری کی مسلسل عدم دلچسپی بین الاقوامی اخلاقی نظام کے خاتمے کے ساتھ ساتھ امریکی صہیونی تسلط کے عروج کی نشاندہی کرتی ہے۔
آخر میں جہاد اسلامی کے رکن نے بین الاقوامی فوجداری عدالت سے مطالبہ کیا کہ وہ امریکی اور صیہونی حکومت کی  طرف سےاس عدالت اور اس کے ججوں کی لگاتارتوہین کے خلاف عملی موقف اختیار کرے۔


0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین