بیرونی ممالک میں افغانستان کے سفارت خانوں کی غیر یقینی صورتحال

کابل اور افغانستان پر طالبان کے قبضہ کرنےکے ایک ماہ بعد بھی دوسرے ممالک میں موجود اس ملک کی سیاسی نمائندگیوں کے کاموں کو دوبارہ شروع کرنے کے بارے میں کوئی فیصلہ نہیں کیا گیا۔

ولایت پورٹل:طلوع نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق افغانستان کی عبوری کابینہ کی وزارت اطلاعات و ثقافت نے دوسرے ممالک میں موجود افغانستان کے سفارت خانوں کی سرگرمیاں دوبارہ شروع کرنے کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ  وزارت خارجہ سیاسی نمائندگیوں کا فیصلہ کرے گی۔
واضح رہے کہ  افغان وزارت اطلاعات و ثقافت کے ثقافتی کمیشن کے رکن سعید خوستی نے کہا کہ اس فیصلے کا اعلان وزارت خارجہ جلد کرےگی ، انہوں نے مزید کہا کہ بیرونی ممالک می موجود سیاسی اور سفارتی مشن وزارت خارجہ کی مشاورت کے بغیر کام نہیں کریں گے، خوستی نے مزید کہاکہ بیرون ملک موجود نمائندگیاں اب امارت اسلامیہ (طالبان) کی نمائندگی کر رہی ہیں اور وزارت خارجہ اس پر کام کر رہی ہے، وہ جلد ہی اس سلسلہ میں فیصلہ کر ےگی۔
رپورٹ کے مطابق ، افغان سفارت خانوں کی غیر یقینی صورتحال کی طوالت  کی وجہ سے متعدد افغان سفارت کار غیر یقینی کی حالت میں ہیں جبکہ ان میں سے کچھ پناہ کے خواہاں ہیں۔
 افغان سفارت کاروں کے مطابق افغان حکومت نے چند ماہ سے ماہانہ تنخواہ ، کرایہ اور دیگر اخراجات ادا نہیں کیے ہیں، دوسری جانب اقوام متحدہ میں افغانستان کے مستقل نمائندے نے اس تنظیم کے سکریٹری جنرل سے کہا ہے کہ وہ ان کی مدت بڑھا دیں، اقوام متحدہ کے ترجمان نے روئٹرز کو بتایا کہ اقوام متحدہ میں افغانستان کے نمائندے غلام اسحاق زی 27 ستمبر کو ہونے والے اجلاس میں افغانستان کی جانب سے شرکت کریں گے۔

0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین