امریکہ کی ترکی پر پابندیاں عائد؛ انقرہ کا شدید رد عمل

ترکی کی حکومت نے امریکی سینیٹ میں ترکی کے خلاف پابندیوں کے منصوبے کی توثیق اور قبرص کے خلاف عائد اسلحہ کی پابندی ختم کرنے کو اپنی خودمختاری کی توہین قرار دیا ہے۔

ولایت پورٹل:ڈیلی صاباح اخبار کی رپورٹ کے مطابق ترکی کی وزارت خارجہ  نے منگل کے دن امریکی  سینیٹ میں پاس ہونے دفاعی بل 2020 کے تحت ترکی پر پابندیاں عائد کرنے کے سلسلہ میں امریکی  سینیٹ  کی منظوری پر رد عمل کا اظہارکرتے ہوئے کہا ہے کہ روس کے ایس -400 میزائل دفاعی نظام  کی خریداری کو بہانہ بنا کر پابندیاں عائد کرنا ہماری  کی توہین ہے ،ترک وزارت خارجہ نے روس سےایف 35 جنگی طیاروں  کی فراہمی منسوخ کرنے کے واشنگٹن کے فیصلے کی بھی  مذمت کی،وزارت کے بیانیہ میں مزید آیا ہے کہ 2020ء کے امریکی دفاعی بجٹ میں ایک بار پھر ترکی کی دشمنی پر مبنی شقیں شامل ہیں،بیان میں مزید آیا ہے کہ امریکی کانگریس کے ممبران داخلی سیاسی برتری  کے خواہاں ہیں  اور وہ  ترکی مخالف حلقوں کے زیر اثر کام کرنے سے امریکہ کے ساتھ تعلقات میں بہتری کے امکانات کو نقصان پہنچا رہے ہیں،ترک وزارت خارجہ نے امریکی کانگریس کی جانب سے  ایف 35 جنگی طیاروں کی خریداری  کے بارے میں دھمکی آمیز لہجے پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ اس منصوبے سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ کانگریس غیر معمولی طور پر معاندانہ رویہ اپناتے ہوئے ترکی کے خودمختار فیصلوں کی توہین کررہی  ہے،آخر میں  ترک وزارت خارجہ نے اس بات پر زور دیا کہ وہ اس طرح کے منصوبوں کا جواب دینے کے لئے ضروری اقدامات کررہے ہیں،انھوں نے کہا کہ ترکی کی جانب سے تمام وعدوں پر عمل کرنے کے باجود اس کے تمام وعدے ہمیں ایف 35 طیارے خریدنے میں رکاوٹیں کھڑی کر رہی ہے۔





0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین