Code : 2467 85 Hit

میں اردگان کی طرف ہوں:ٹرمپ

امریکی صدر نےڈونلڈ ٹرمپ نے واشنگٹن میں ترکی کے صدر اردگان سے ملاقات کے بعد ترکی کو اپنے اسٹریٹجک پارٹنر کے نام سے یاد کیا۔

ولایت پورٹل:ترکی کے صدر رجب طیب اردگان نے بدھ کی شب واشنگٹن میں امریکی صدر سے ملاقات کی جس کے بعد امریکی صدر نے کہا کہ ترکی نیٹو میں امریکہ  کا اہم شراکت دار اور اسٹریٹجک پارٹنر   ہے،انہوں نے خود  ترک صدر کی تعریف بھی کی اور کہا  کہ مزید خوشحال مشرق وسطی بنانے کی کوشش میں اردگان کے تعاون پر ان کا شکریہ ادا کرنا چاہتا ہوں، میں ان کا حامی ہوں، ترکی کے پاس نیٹو کی دوسری بڑی فوج ہے اور ان کے پاس  دوسری طاقت ور فوج ہے،ٹرمپ نے ترکی کو  افغانستان ، شام اور داعش کی تباہی کا  بھی ایک اہم شراکت دار بھی قرار دیتے ہوئے کہا  کہ داعش کے سابق سربراہ ابوبکر البغدادی کو ہلاک کرنے میں ترکی کا تعاون کا اہمیت کا حامل تھا،امریکی صدر نے مزید کہا کہ میرے خیال میں اردگان کے کردوں کے ساتھ اچھے تعلقات ہیں،ترکی کے  صدر نے بھی اس ملاقات کے بعد  شمالی شام میں "آپریشن اسپرنگس آف پیس" کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ  انقرہ نے دہشت گردی کے خلاف یہ اہم قدم اٹھایا ہے،قابل ذکر ہے کہ  اردگان کو  اس  آپریشن پر امریکہ کی جانب سے کافی تنقید کا سامنا کرنا پڑا تھا خاص طور پر امریکی قانون سازوں نے اس کی  شدید تنقید تھی،اردگان  جنہوں نے امریکہ  کے ساتھ مل کر شام میں خانہ جنگی کی آگ بھڑکانے میں اہم رول ادا کیا  تھا ، اب دعوی کررہے ہیں کہ انقرہ اور واشنگٹن شام میں استحکام کی بحالی اور داعش دہشت گرد گروہ کا خاتمہ کرنے میں اہم کردار ادا کرسکتے ہیں،ادھر اردگان نے یہ بھی کہا ہے  کہ ملاقات کے دوران انھوں نے  ٹرمپ کو وہ متنازعہ خط بھی واپس کردیا  جوا نھوں نے شام جنگ کے موقع مجھے لکھا تھا نیز مظلوم کوبانی کے دہشتگرد ہونے پر مبنی سی آئی اے کی تیارکردہ دستاویزات بھی ٹرمپ کو دکھائی ہیں۔



0
شیئر کیجئے:
फॉलो अस
नवीनतम