آل سعود اور اقوام متحدہ کی ملی بھگت سے یمن کے خلاف بحری قزاقی ہو رہی ہے:یمنی وزیر تیل

یمنی وزیر تیل نے یمنی ایندھن لے جانے والے جہاز ضبط کرنے میں اقوام متحدہ کی سعودی عرب کے ساتھ ملی بھگت پر تنقید کی۔

ولایت پورٹل:المسیرہ نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق  یمنی وزیر تیل احمد عبداللہ دارس نے اعلان کیا ہے کہ اقوام متحدہ بحری قزاقی اور یمنی ایندھن بحری جہازوں کو ضبط کرنے میں سعودی عرب کے ساتھ ملی ہوئی ہے، انہوں نے مزید کہا کہ یمن کے خلاف سعودی اتحاد کی جارحیت نے اربوں ڈالر کا نقصان پہنچایا ہے اور تیل کی مصنوعات کے متعدد منصوبوں کو روک دیا ہے۔ دارس نے کہا کہ سعودی اتحاد نے نہ صرف یمنی عوام کا محاصرہ کیا ہے  بلکہ انھوں نے الحدیدہ کی بندرگاہ میں ایندھن اور تیل لے جانے والے جہازوں کو بھی ضبط کرلیا ہے۔
انہوں نے مزید کہاکہ سعودی عرب کی یہ بحری قزاقی اور تیل کی مصنوعات لے جانے والے جہازوں کی ضبطی یمنیوں پر بہت بھاری اخراجات عائد کرے گی، دارس نے مزید کہاکہ یمن کی وزارت تیل سعودی جارحیت پسند اتحاد کے خلاف مقدمہ دائر کرنے کا ارادہ رکھتی ہے کیونکہ ان تمام جہازوں کو اقوام متحدہ کا اجازت نامہ پہلے ہی مل چکا ہے، انہوں نے مزید کہاکہ بدقسمتی سے اس سلسلے میں اقوام متحدہ  سعودی اتحاد کے ساتھ مل چکی ہے اور ہم سعودی جارحیت اور قزاقی کے مقابلہ میں اس تنظیم کی خاموشی کا مشاہدہ کر رہے ہیں جبکہ یمن کے بیشتر اہم حصے ایندھن کی کمی کی وجہ سے لوگوں کی خدمت نہیں کرسکتے ہیں۔
واضح رہے کہ اقوام متحدہ سمیت پوری عالمی برادری یمن میں سعودی عرب کی جانب سے جاری دہشتگردی اور جارحیت پر یا تو خاموش ہے یا پھر سعودی عرب ہی کے حق میں بولتی  ہے  جیسا کہ حال ہی میں اقوام متحدہ نے سعودی عرب کا نام بچوں کے حقوق کو پامال کرنے والے ممالک کی فہرست میں سے نکال کر ثابت کردیا کہ ہمارے لیے ڈالر اہم ہیں  نہ کہ قوموں کی مظلومیت۔


0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین