Code : 4375 2 Hit

امارات اور بحرین کا صیہونیوں کے ساتھ سمجھوتہ فلسطین کے نقصان اور امریکہ کے فائدہ میں ہے:برطانوی اخبار

ایک برطانوی اخبار نے لکھا کہ سابق برطانوی وزیر اعظم تل ابیب اور دونوں عرب ممالک کے مابین حالیہ معاہدے کے ثالثوں میں سے ایک تھے لیکن اس ثالثی اور معاہدے میں فلسطین کے لئے کوئی مراعات نہیں ہیں ،یہ صرف امریکی اسلحہ کے سودوں کو فروغ دیتا ہے۔

ولایت پورٹل:برطانوی اخبار ڈیلی میل نے صیہونی حکومت کے ساتھ بحرین اور متحدہ عرب امارات کے مابین حالیہ معاہدوں کا ذکر کرتے ہوئے لکھا ہے کہ مشرق وسطی میں  حال ہی میں ہونے والے معاہدوں میں سابقہ برطانوی وزیر اعظم ٹونی بلیئر کے ایک ثالت تھے اور ان معاہدوں کا فلسطین کو کوئی فائدہ نہ ہونے کی وجہ سے انھیں تنقید کا نشانہ بنایا جارہا ہے۔
رپورٹ کے مطابق صہیونی حکومت نے رواں ہفتے منگل کو وائٹ ہاؤس میں منعقدہ ایک تقریب کے دوران متحدہ عرب امارات اور بحرین کے ساتھ معاہدے پر دستخط کیےاور تینوں فریقوں نے تعلقات معمول پر لانے کا وعدہ کیا ہے۔
برطانوی اخبار نے اس معاہدے کے بارے میں امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی انتظامیہ کی حمایت کا ذکر کرتے ہوئے لکھا کہ ان معاہدوں کے عمل میں آجانے کے باوجود  یہ خدشات موجود ہیں کہ اس طرح کے معاہدوں سے  نہ صرف یہ کہ  امن قائم نہیں  ہوگا بلکہ خطے میں اسلحے کی ایک نئی دوڑ کا آغاز ہوگا۔
یادرہے کہ منگل کے روز  ایک صیہونی اخبار نے بلیئر کا شکریہ ادا کیا کہ انہوں نے بحرین اور متحدہ عرب امارات کے ساتھ صیہونی حکومت کے حالیہ معاہدوں میں کلیدی کردار ادا کیا ہے۔
تاہم جیسا کہ ڈیلی میل کی رپورٹ سے ظاہر ہوتا ہے کہ معاہدے پر تنقید کرنے والوں  کا کہنا ہے کہ یہ صرف تینوں دستخط کنندگان اور امریکہ کے فائدہ مندہے اور اس میں فلسطین-صیہونی تنازعہ کو ختم کرنے کی کوئی تجویز نہیں ہے۔


0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین