شمالی عراق پر ایک بار پھر ترکی کی بمباری

ترکی نے ایک بار پھرعراقی کردستان کے علاقے میں ڈھوک صوبے کے ایک گاؤں پر فضائی حملہ کیا ہے۔

ولایت پورٹل:بغداد الیوم نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق عراقی کردستان کے علاقے میں ڈھوک صوبے کے ایک سکیورٹی ذرائع نےصوبے کے ایک گاؤں پر ترک فضائی حملے کی اطلاع دی ہے، سکیورٹی ذرائع نے بتایا کہ عراقی کردستان میں صوبہ ڈھوک میں واقع اکیری علاقے کے ایک گاؤں پر ترک لڑاکا طیاروں نے بمباری کی ہے، ذرائع نے مزید کہاکہ ابھی تک اس حملے میں ہونے والےجانی و مالی نقصان کی اطلاع نہیں ملی ہے، مقامی حکام حملے کے ممکنہ نقصان اور ہلاکتوں کا اندازہ لگانے کی کوشش کر رہے ہیں۔
یادرہے کہ کچھ دن پہلے  ترکی کی سرحد کے قریب اربیل کے شمال میں واقع سیدکان علاقے میں عراقی سرحدی محافظوں پر ہونے والے ترکی کےفضائی حملے میں دو عراقی کمانڈر اور ان کا ڈرائیور ہلاک ہوگئے تھے  جس کے بعد عراق اور ترکی کے مابین شدید کشیدگی میں اضافہ ہو ااور اس سلسلے میں عراقی وزارت خارجہ نے ترک سفیر کو طلب کیا،واضح رہے کہ ترکی نے جون کے آخر سے شمالی عراق میں ہی پی کے کے عناصر کے خلاف "ٹائیگر کا پنجہ" نامی زمینی اور ہوئی آپریشن کا آغاز کیا ہے،تاہم  عراقی وزارت خارجہ نے متعدد بار اس ملک کی سرزمین پر ترک فوجی حملوں کے خلاف بغداد میں ترک سفیر فتاح یلدیز کو کئی بار وزارت خارجہ طلب کیا ہے۔
واضح رہے کہ انقرہ کے خلاف بغداد اور عرب ممالک کے وسیع پیمانے پر احتجاج کے باوجودترکی کی جانب سے شمالی عراق میں فوجی کارروائیاں جاری ہیں جہاں ترکی کا دعوی ہے کہ وہ کرد دہشتگرد عناصر کے خلاف کاروئیاں کر رہے لیکن عراقی عوام اور حکام کا کہنا ہے ترکی کی کاروئیوں میں زیادہ تر اس ملک کی عوام اور فوج کو نشانہ بنایا جاتا ہے جیسا کہ کچھ ہی دن قبل ترکی کے ہاتھوں دو عراقی کمانڈر ہلاک ہوئے ہیں۔


0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین