ٹرمپ کا ایک بار پھر تارکین وطن کے لیے توہین آمیز الفاظ کا استعمال

سابق امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ جنہیں اپنی صدارت کے دوران امیگریشن مخالف پالیسیوں کے لیے وسیع پیمانے پر تنقید کا نشانہ بنایا گیا تھا ، نے بائیڈن کے دوران غیر قانونی تارکین وطن کی بے مثال تعداد کا حوالہ دیتے ہوئے تارکین وطن کو سیوریج سے تشبیہ دی اور کہا کہ امریکا انسانیت کا گٹر بنتا جا رہا ہے۔

ولایت پورٹل:واشنگٹن ایگزامینر کی رپورٹ کے مطابق  سابق امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے اتوار کو ایک بیان جاری کیا جس میں کہا گیا ہے کہ غیر قانونی تارکین وطن کی بے مثال تعداد امریکہ میں بغیرکنٹرول کے داخل ہو رہی ہے جس کی وجہ سےیہ ملک انسانیت کے لیے گٹر کا کنواں بنتا جا رہا ہے۔
یادرہے کہ  تارکین وطن کے لیے ٹرمپ کی توہین 2018 میں امریکی صدارتی محل میں اپنی صدارت کے دوران پہلے ہی عروج پر تھی، اس وقت امریکی میڈیا نے ڈونلڈ ٹرمپ کے کچھ ممالک کے تارکین وطن کے لیے توہین آمیز الفاظ استعمال کرنے کا حوالہ دیتے ہوئے لکھا کہ ٹرمپ نے وائٹ ہاؤس میں منعقدہ ایک سرکاری اجلاس میں اپنی امیگریشن مخالف پالیسیاں جاری رکھتے ہوئے السلواڈور اور ہیٹی جیسے ممالک سے تارکین وطن کی آمد کا حوالہ  دیا  اور کہا کہ  یہ لوگ ٹائیلٹ کا گٹر ہیں اور ہم انھیں اپنے ملک میں داخل ہونے دیں؟
واضح رہے کہ ٹرمپ نےاپنے ایک حالیہ بیان میں کہا کہ  اب صورتحال سرحدی بحران تک محدود  نہیں ہے بلکہ ایک شدید بحران بن چکی ہےجبکہ ہیٹی اور افریقی ممالک سے دسیوں ہزار لوگ امریکہ میں داخل ہو رہے ہیں، انہوں نے مزید کہاکہ نہ کوئی کاروائی نہیں کی جارہی ہے اور نہ ہی کرپٹ میڈیا اس حقیقت پر کوئی توجہ  دے رہا ہے جبکہ یہ  شاید امریکی تاریخ کا سب سے بڑا بحران بن جائے گا۔
واضح رہے کہ امریکی حکومت کے  اعداد و شمار کے مطابق 2021 میں امریکی بارڈر پولیس نے غیر قانونی طور پر امریکہ میں داخل ہونے پر تقریبا 1.85 ملین افراد کو گرفتار کیاجو  ایک نیا ریکارڈ ہےجبکہ 2000 میں امریکی بارڈر پٹرول 1.64 ملین غیر قانونی تارکین وطن کو حراست میں لینے میں کامیاب رہا۔

0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین