Code : 2591 50 Hit

شام میں کرد نامی کوئی بحران نہیں ہے:دمشق

آستانہ مذاکرات کے موقع پر شامی حکومت کے نمائندے نے کہا کہ حکومت کردوں کی کسی بھی طرح کی خود مختاری کی مخالفت کرتی ہے، وہ شامی عوام کا حصہ ہیں۔

ولایت پورٹل:عنب‌بلدی ویب سائٹ کی رپورٹ کے مطابق  اقوام متحدہ میں شامی حکومت کے مندوب اور آستانہ مذاکرات دمشق کے وفد  کے سربراہ بشار الجعفری نے بدھ کو مذاکرات سے قبل کہا کہ شامی حکومت کردوں کے خود مختار علاقے کی تشکیل کو مسترد کرتی ہے،انہوں نے کہا شام میں کرد بحران کے نام پر کوئی بحران نہیں ہے اور کرد شامی عوام اور شام کے وجود کا لازمی جز ہیں ،ان کے ساتھ بات چیت ملکی مسئلہ ہے  جس کو ملک  کے اندر ہی حل کیا جائے گا،انہوں نے خودمختاری کو مکمل طور پر مسترد کرتے ہوئے  کہا کہ شامی حکومت اس مسئلے کو علیحدگی پسند تحریک کے طور پر دیکھتی ہے  اور کردوں  کے ساتھ بات چیت جاری رکھے ہوئے ہے تاکہ انھیں  اپنی غلطیوں کا احساس ہوسکے اوروہ  امریکہ کے کہنے پر نہ چلیں،قابل ذکر ہے کہ اب جبکہ شامی فوج اور اس کی اتحادی افواج نے دہشت گردوں پر قابو پالیا ہے اور شام کے بیشتر علاقے کو آزاد کرایا ہے کرد ملیشیا کے  معاملہ کی وجہ سے اس ملک کی  سیاست اور سلامتی پر خاص اثرات مرتب ہوئے ہیں ،یاد رہے کہ شامی قومی کونسل کے سربراہ علی مملوک جمعرات کے روز قامشلی شہر میں قبائلی عمائدین کے ایک گروپ کے ساتھ ملاقات کی  اور ان سے اپیل کی  کہ وہ اپنے بچوں کو شامی ڈیموکریٹک فورسز (کی اے ڈی) کی صفوں سے الگ کرلیں،کرد نیوز ایجنسی  ہاور نے بھی لکھا ہے کہ قبائلی عمائدین نے بھی علی مملوک سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ عام معافی جاری کریں اور مطلوبہ افراد کے معاملے کو حل کریں۔



0
شیئر کیجئے:
फॉलो अस
नवीनतम