Code : 3406 32 Hit

یمن میں ایران کی کوئی مداخلت نہیں ہے:الحوثی

یمنی سپریم انقلابی کمیٹی کے سربراہ نے ایران کے خلاف امریکہ اور ریاض کی طرف سےلگائے جانے والے الزامات کو مسترد کرتے ہوئے کہا کہ تہران کا یمن میں کوئی دخل نہیں ہے اور یہ بھی کہا ہے کہ اگر سعودی اتحاد انصاراللہ کی شرائط سے اتفاق کرتا ہے تو یہ گروپ امن معاہدے پر دستخط کرنے کے لئے ریاض کا سفر کرنے پر راضی ہوگا۔

ولایت پورٹل:یمنی سپریم انقلابی کمیٹی کے چیئرمین ، محمد علی الحوثی نے امریکی وال اسٹریٹ جرنل کو انٹرویو دیتے ہوئے یمن میں ایرانی مداخلت کے سلسلہ میں لگائے جانے والےتمام امریکی اور سعودی الزامات کی تردید کی۔
انھوں نے انصار اللہ کی مالی اعانت اور اسلحے سے متعلق ایران کے خلاف امریکہ  اور سعودی عرب کے الزامات کے بارے میں کہاکہ ایران کی کوئی مداخلت نہیں ہےاور ہم ایک آزاد ملک ہیں۔
یمنی سپریم انقلابی کمیٹی کے سربراہ نے انٹرویو کے اگلے حصے میں یمن میں جامع امن مذاکرات میں داخلے کے لئے انصار اللہ کی پیشگی شرائط کا حوالہ دیا جواس تنظیم نے  اپریل کے اوائل میں رکھی تھیں۔
واضح رہے کہ اطلاعات کے مطابق ، یمنی سپریم انقلابی کمیٹی کے سربراہ نے یمن کے لئے اقوام متحدہ کے خصوصی مندوب مارٹن گریفھیس سے ویڈیو کانفرنس کی صورت میں ہونے والی ملاقات کے دوران پانچ پیشگی شرائط کو امن مذاکرات شروع کرنے کے لئے ضروری قرار دیا تھا جن میں سعودی اتحاد کی یمن پر جارحیت کا خاتمہ ، اس ملک کا محاصرہ اٹھانا ، خاتمے اور الحدیدہ کی بندرگاہ میں داخل ہونے والےتاجر جہازوں کے داخلے پر پابندی اور ان کی تلاشی ختم کیا جانا شامل تھا۔
محمد علی الحوثی نے اقوام متحدہ کے زیر اہتمام جامع امن مذاکرات میں شرکت کرنے کے لیے انصاراللہ کی پیشگی شرط کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ ہماری پیش کش بہت آسان تھی، ہم نے ان سے اپنے ملک کوچھوڑنے ، محاصرے کو ختم کرنے ، بمباری روکنے کو کہاجو بہت آسان تھا۔
 
 

0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین