صیہونیوں کے لیے ایران اور حزب اللہ کی جاسوسی کرنے والے لبنانی صحافی کی کہانی

لبنان کے سکیورٹی ذرائع نے صیہونیوں کے ہاتھوں ایران اور حزب اللہ کےخلاف لبنانی صحافی کی خدمات حاصل کرنے بارے میں معلومات کا انکشاف کیا کہ کس طرح ایک لبنانی صحافی صیہونی حکومت کے لیے جاسوسی کر رہا تھا اور اس سے ایران اور حزب اللہ کے خلاف کام لیا جارہا تھا

ولایت پورٹل:المنار چینل کی رپورٹ کے مطابق محمد شعیب لبنانی صحافی ہیں جنہیں گذشتہ ماہ کے اواخر میں صیہونی حکومت سے روابط اور اس کے لیے جاسوسی کے الزام میں گرفتار کیا گیا تھا،چینل نے سکیورٹی ذرائع کا حوالہ دیتے ہوئے تفصیلات شائع کیں کہ اس صحافی نے صیہونیوں کے لیے کس طرح جاسوسی کی اور لکھا کہ شعیب متعدد نیوز سائٹس، الجرس اور لبنان-24 میں سرگرم تھا۔
ذرائع کا کہنا ہے کہ شعیب نے ایک ویب سائٹ پر غیر ملکی کمپنی کا اشتہار دیکھا اور پھر ان سے رابطہ کیا، غیر ملکیوں نے اسے ماہانہ کئی مضامین لکھنے کے عوض ماہانہ تنخواہ کی پیشکش کی،ذرائع کے مطابق ابھی اس نے کام شروع ہی کیا تھا کہ ٹام نامی اسرائیلی نے اس کے ساتھ رابطہ کیا۔
 ٹام نے شعیب سے سیاسی مسائل پر کالم لکھنےکو کہا جو تنازعات کے موضوع پر ہونا چاہیے تھےاور ان میں ایسے معاملات کے بارے میں بھی ہونا چاہیے تھا جو خلیجی ریاستوں کے مفاد میں ہوجبکہ ایران، حزب اللہ اور حماس کے خلاف معاندانہ زبان کا استعمال ہو،اس کے بعد ٹام نے لبنانی صحافی سے کہا کہ وہ ان رپورٹس کو ایسے پیش کرےجیسے لبنان پر ایران کا قبضہ ہو گیا ہو۔
 اس کے بعد اس نے اس سے کہا کہ وہ ان رپورٹس کو الکلمہ آن لائن، لبنان 24، وائس آف آل لبنان کی ویب سائٹ پر شائع کرےاور اسے فی رپورٹ $50 سے $75 ادا کیے جائیں گے۔

0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین