بحران سے دوچار امریکی ریاست ٹیکساس کی حالت زار

امریکی ریاست ٹیکساس کے بہت سارے حصے غیر معمولی شدید برفباری کے بعد منہدم ہوگئے ہیں, ان علاقوں کے رہائشیوں کو شدید برف باری اور طوفان کی وجہ سے پانی اور بجلی تک رسائی حاصل نہیں ہے اور وہ خوراک لینے کے لئے خریداری مراکز پر حملے کر رہے ہیں۔

ولایت پورٹل:امریکی ریاست ٹیکساس کے رہائشی ، جو خود کو بجلی اور حرارتی آلات کے بغیر محاصرے میں محسوس کر رہے ہیں  مشکل دن سے گزر رہے ہیں  اور اس کے نتیجے میں ، ان میں سے درجنوں اپنی زندگی سے ہاتھ دھو بیٹھے ہیں، ان میں سے بہت سے لوگوں نے برفانی طوفان کی وجہ سے اپنے گھروں میں پانی داخل ہونے کی تصاویر شائع کی ہیں، میڈیا نے ٹیکساس کی حالت زار سے مختلف مناظر کا احاطہ کیا ، ان میں سے ایک ایسی پناہ کی تلاش کرنے والی بچی کی  تصویر سامنے آئی جو روتی ہوئی  سردی میں گھوم رہی ہے۔ تارکین وطن کو خیموں جو برف کے صندوق جیسے لگ رہے ہیں، کے اندر چھوڑ دیا گیاہے جہاں وہ  حرارتی سامان یا کسی دوسرے معیار زندگی سے محروم ہیں لیکن ایسا لگتا ہے کہ وفاقی عہدے دار ان پر توجہ نہیں دے رہے ہیں اس لیے کہ  متاثرہ لوگوں کو کم سے کم خدمات فراہم کی گئی ہیں ، انہیں خود کو بچانے کے لئے کاروائی کرنے پر مجبور کیا گیا ، وہ لوگ کھانا پینے کی اشیا فراہم کرنے کے شاپنگ مال  کی طرف حملہ  آورہو رہے ہیں، پانی اور پروپین ٹینکس لے کر لائنوں میں کھڑے ہیں، شدید برف باری کی وجہ سے ٹیکساس میں لگ بھگ دو لاکھ گھروں میں بجلی منقطع ہو چکی ہے اور گٹر کا نظام بند  ہوگیا ہے جس کی وجہ سے ٹیکساس کے حکام کو حفظان صحت کے معیار کی بنا پر تقریبا سات لاکھ باشندوں کو پانی استعمال کرنے سے پہلے اس کو ابالنے کو کہا گیا ہے۔
 واضح رہے کہ لوزیانا اور ٹیکساس میں پناہ حاصل کرنے والے تارکین وطن کو حراستی مراکز میں ایسے مشکل حالات کا سامنا کرنا پڑتا ہے جو یرغمال بنائے جانے والے مراکز کی طرح ہیں، ان مراکز میں سے ایک میں  متعدد وکلاء نے ان پناہ گزینوں کی حالت زار پر روشنی ڈالی ہے۔ صحت ، حرارت اور پینے کے پانی کی کمی کے لحاظ سے والدین اور ان کے بچے انتہائی خراب حالات میں رہتے ہیں ۔
واضح رہے کہ یہ صرف تارکین وطن ہی نہیں ہیں جن کی پانی اور بجلی تک رسائی منقطع ہوگئی ہے بلکہ ٹیکساس کے لاکھوں باشندے بھی ایک بحران کا شکار ہیں، کہا جاتا ہے کہ امریکہ بھر میں سردی اور برفانی طوفان سے لگ بھگ 60 افراد کی ہلاکت کی تصدیق ہوئی ہے، ٹیکساس ٹریبیون نے ٹویٹر پر لکھا کہ برف اورطوفان کی وجہ سے ٹیکساس میں صورتحال ابھی تک معمول پر نہیں آسکی ہے،تجزیہ کاروں کا خیال ہے کہ بجلی اور گرمی کی کمی کی وجہ سے مرنے والے افراد کی تعداد اعلان کردہ اعدادوشمار سے بالاتر ہے، قابل ذکر ہے کہ  ٹیکساس ایک غریب خطہ نہیں ہے جبکہ ریاستہائے متحدہ اور دنیا میں تیل اور گیس پیدا کرنے والا سب سے بڑی ریاست ہے  اور یہ کہا جاسکتا ہے کہ امریکی دولت کا ایک اعلی فیصد اسی ریاست سے نکالا جاتا ہے اب جبکہ  لاکھوں باشندوں کو بجلی کی بندش کا سامنا ہے  اور ٹیکساس کے قریب نصف باشندوں کو جمعہ کو پانی کی قلت کا سامنا کرنا پڑا۔
 مزید واضح طور پر  ٹیکساس کی معیشت جی ڈی پی کے لحاظ سے دنیا کی نویں نمبر پر ہےلہذا 2019 میں ریاست کا جی ڈی پی 89 1896063 بلین تھاجو برازیل ، کینیڈا ، جنوبی کوریا اور روس کی جی ڈی پی سے زیادہ ہے جی ڈی پی کے معاملے میں کیلیفورنیا کے بعد ہمیشہ ریاستہائے متحدہ کی دوسری سب سے بڑی معیشت رہی ہےلیکن ٹیکساس میں کیلیفورنیا کی آبادی کا تقریبا-چوتھائی آبادی ہے ، اور کیلیفورنیا کے برعکس ، ایک ایسی ریاست ہے جس میں ریپبلکن پالیسیاں ہیں،تاہم  اس دوران  ایسے واقعات پیش آئے ہیں جن سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ ٹیکساس میں پھنسے لوگوں کی کسی کو پرواہ نہیں ہے ، یا کم از کم اس کا ذمہ دار کوئی نہیں ، یہاں تک کہ ان لوگوں نے بھی نہیں جنہوں نے عوام کی خدمت کا نعرہ لگایا تھا ، اور یہ کہ لوگ جنہیں ووٹ دیتے رہے ہیں۔
 اب وقت سردی اور بجلی کی بندش سے دوچار ریاست سے فرار ہونے کے لئے تفریحی سفر کے لئے ہوائی اڈے پر جانے والے ٹیکساس کے سنیٹر ٹیڈ کروز کی تصاویر کی ریلیز نے تنازعات کو جنم دیا ہے ، سوشل میڈیا کارکنوں خصوصا ٹیکساس کے رہائشیوں نے ان سے استعفی کا مطالبہ کیا ہے،ٹیکساس کے سینیٹر ٹیڈ کروز نے تیل اور گیس کمپنیوں سے کسی دوسرے سینیٹر کے مقابلے میں زیادہ رقم لی ہے اور اب ان کی ریاست کو توانائی کے ایک بڑے چیلنج کا سامنا ہے،تاہم  سب سے اہم مسئلہ امریکی صدر جو بائیڈن کا بیدار ہونا ہے اس لیے کہ انھوں نے قریب ایک ہفتہ بعد ٹیکساس میں ایک بڑی تباہی کا اعلان کیا  جس سے ریاست کو مزید وفاقی امداد بھیجنے کی راہ ہموار ہوگئی۔
جبکہ انہوں نے انتخابات کے دوران "ہمارے بہترین دن ابھی باقی ہیں" اور "ہم پہلے سے بہتر تعمیر نو کریں گے" کے نعروں سے لوگوں کو ووٹ دینے کے لیے تیار  کیا ، لیکن عملی طور پر انھوں نے بھی ظاہر کیا کہ امریکی عوام نازک لمحوں میں ان پر اعتماد نہیں کرسکتے ہیں، امریکی صدر کے تاخیر والے موقف کے علاوہ ، ٹیکساس کے شہر کولوراڈو سٹی کے سابق میئر ٹم بائڈ کے ریمارکس نے امریکی عوام کو حیران کردیا اور زندگی کی اقدار کے بارے میں دنیا کے نظریہ کو بھی اچنبے میں ڈال دیا،انھوں نے کہا کہ حکومت کی یہ ذمہ داری نہیں ہے کہ وہ اس طرح کی مشکل صورتحال میں آپ کی مدد کرے، بائڈ نے لوگوں  کو خطاب کر تے ہوئے ایک  پست بیان میں لکھاکہ باقی رہنا یاموت یہ  آپ کی پسند ہے! اب  سوال یہ ہے کہ امریکی حکومت ٹیکساس کے عوام کی دولت کو خودان پر کیوں نہیں خرچ کر رہی ہے بلکہ اس کے بجائے استعماری پالیسیوں اور دنیا کی دوسری قوموں پر دباؤ پر خرچ کیا جارہا ہے۔
کیا ایسے امریکی سیاستدانوں سے توقع کی جاسکتی ہے جو اپنے ہی لوگوں پر رحم نہیں کرتے ہیں وہ دنیا کے دوسرے ممالک کے لوگوں پر رحم کریں گے؟ ایسا لگتا ہے کہ آئے دن اس ملک کے رہنماؤں کے اندرونی سچائی کے انکشاف کے ساتھ - جو عالمی قیادت کا دعویدار ہے - ایسے واقعات میں ، اس سب کو امریکی خودمختاری کے زوال کی علامت سمجھا جاسکتا ہے۔


0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین