ابوظہبی کیمپ میں افغان شہریوں کی حالت زار

امریکی انخلاء کے عمل کے دوران عرب ممالک کے کیمپوں میں منتقل ہونے والے متعدد افغانوں کا اپنی نامعلوم قسمت پر تنقید کرتے ہوئے، کہنا ہے کہ ان کیمپوں میں زندگی مشکل تر ہوتی جا رہی ہے۔

ولایت پورٹل:امریکہ کی جانب سے ابوظہبی کے ایک مہاجر کیمپ میں منتقل کیے گئے افغان باشندوں نے اپنی نامعلوم قسمت کے بارے میں تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ تقریباً آٹھ ماہ گزرنے کے باوجود انہیں منزل کے ممالک میں منتقلی کے بارے میں کوئی واضح جواب نہیں ملا ہے۔
افغان پناہ گزینوں نے کہا کہ انہیں کیمپوں سے باہر جانے کی اجازت نہیں دی جاتی،اس بات پر زور دیتے ہوئے کہ منزل کے ممالک کے ویزوں کے انتظار نے انہیں تھکا دیا ہے ، انہوں نے واضح جواب کا مطالبہ کیا۔
ابوظہبی کیمپ میں منتقل کیے گئے لوگوں میں سے ایک قدیر شاہین نے RFE کو بتایا کہبدقسمتی سے، افغانوں کو ان دو کیمپوں میں منتقل کرنے والی تنظیموں کا کام تنقید کے لائق ہے،ان میں سے زیادہ تر تنظیمیں مہاجرین کے لیے جوابدہ نہیں ہیں اور دستیاب نہیں ہیں اور نہ ہی موجودہ صورتحال کے بارے میں کوئی بات کرنے کے لیے تیار ہیں۔
انھوں نے مزید کہا کہ 8 ماہ گزرنے کے بعد بھی عام صورت حال میں کوئی تبدیلی نہیں آئی، تمام افغان جو یہاں موجود ہیں نامعلوم صورتحال سے دوچار ہیں، معلومات کے کوئی خاص ذرائع نہیں ہیں، ہر کوئی اس صورتحال سے نکلنے کا انتظار کر رہا ہے۔

0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین