صیہونی فوج میں خودکشی کا بڑھتا رجحان

صیہونی میڈیا نے صیہونی فوج میں خودکشی کے بڑھتے رجحان کا ذکر کرتے ہوئے کہا ہے کہ رواں سال میں اس ریاست کی فوج میں خودکش کی شرح دوگناہ ہو گئی ہے۔

ولایت پورٹل:صیہونی میڈیا کی رپورٹ کے مطابق رواں سال میں صیہونی حکومت کی فوج میں خودکشی کی شرح میں اضافہ ہوا ہے اور اس سال کے آغاز سے (چھ ماہ کے اندر) 11 فوجیوں نے خودکشی کی ہے، رپورٹ کے مطابق یہ اس وقت ہے جب گزشتہ سال (2021) میں 11 فوجیوں نے خودکشی کی اور 2020 میں 9 صہیونی فوجیوں نے خودکشی کی۔
اس واقعے میں اضافے کے بعد، اسرائیلی فوج کے حکام نے صہیونی فوج میں خودکشیوں میں خطرناک حد تک اضافے کی وجوہات کی تحقیقات کے لیے حکومت کے دماغی صحت کے حکام کے ساتھ ہنگامی میٹنگیں کی ہیں۔
کنیسٹ ریسرچ سینٹر (صیہونی پارلیمنٹ) کے سرکاری اعداد و شمار بتاتے ہیں کہ صیہونیوں میں ہر سال 500 خودکشیاں ہوتی ہیں جن میں سے 100 نوجوان نسل اور 15 سے 24 سال کی عمر کے درمیان ہوتی ہیں۔
فلسطین ٹوڈے کے مطابق اسرائیلی فوج کی صفوں میں غیر جنگی حالات میں اب بھی خودکشی موت کی سب سے بڑی وجہ ہے اور حالیہ برسوں میں اس رجحان میں شدت آئی ہے، اس حوالے سے گزشتہ ماہ عبرانی زبان کے اخبار اسرائیل ہیوم نے انکشاف کیا کہ انٹیلی جنس سروس میں کیپٹن کے عہدے کے حامل ایک اسرائیلی افسر نے حال ہی میں ایک عمارت سے چھلانگ لگا کر خودکشی کر لی تھی۔

0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین