Code : 3054 53 Hit

آذربائجان کے مشہور عالم قید سے رہا؛ نماز جمعہ پڑھانے کے سبب ہوئی تھی گرفتاری

جمہوریہ آذربائجان میں تمام مذہبی اور دینی عبادات و مناسک پر پابندی ہے۔ لیکن تعجب کی بات تو یہ ہے کہ جس ملک میں تقریباً ۹۵ فیصد مسلمان رہتے ہوں وہاں انہیں اپنے دین و مذہب کے مطابق جینے اور مرنے کا بھی حق نہیں دیا جاتا اور ایسے نطام کو ڈیموکریسی کہا جاتا ہے ۔ ایسا لگتا ہے کہ آذربائجان کی حکومت صہیونیوں کی طرز پر حکومت کرنے کو ہی ڈیموکریسی گمان کرتی ہے۔

ولایت پورٹل: موصولہ اطلاعات کے مطابق آذربائجان کے مشہور و معروف شیعہ عالم دین، شیخ سردار حاجی حسن علی صاحب کو تین برس کے طویل عرصہ کے قید سے رہائی مل گی ہے۔
اطلاعات کے مطابق مولانا نماز کے قیدی کے  نام سے معروف تھے جنہیں حکومت آذربائجان نے اس وجہ سے جیل میں ڈال دیا تھا کہ انہوں نے حکومت کی مرضی کے بغیر نماز جمعہ پڑھائی تھی ۔
یاد رہے کہ جمہوریہ آذربائجان میں تمام مذہبی اور دینی عبادات و مناسک پر پابندی ہے۔ لیکن تعجب کی بات تو یہ ہے کہ جس ملک میں تقریباً ۹۵ فیصد مسلمان رہتے ہوں وہاں انہیں اپنے دین و مذہب کے مطابق جینے اور مرنے کا بھی حق نہیں دیا جاتا اور ایسے نطام کو ڈیموکریسی کہا جاتا ہے ۔ ایسا لگتا ہے کہ آذربائجان کی حکومت صہیونیوں کی طرز پر حکومت کرنے کو ہی ڈیموکریسی گمان کرتی ہے۔
جبکہ اقوام متحدہ کے مسلمہ قوانین کی رو سے ہر انسان کو اپنے دین پر آزادی کے ساتھ عمل کرنا کا پورا حق ہے اور یہی ڈیموکریسی کی بنیاد تصور کی جاتی ہے۔
مولانا شیخ سردار حاجی حسن علی صاحب مجلس علمائے آذربائجان کے رکن اور آذری زبان میں ٹیلی کاسٹ ہونے والے سیٹر لائیٹ چینل مائدہ کے جنرل سکریٹری بھی ہیں۔
 


0
شیئر کیجئے:
फॉलो अस
नवीनतम