Code : 2675 10 Hit

سعودی عدلیہ میں انصاف کا مذاق اڑایا گیاہے: اقوام متحدہ کے رپورٹر

اقوام متحدہ کے رپورٹر نے سعودی حکام کی جانب سے من مانی پھانسیوں اور خاشقجی کے قتل کیس سے متعلق فیصلہ کو انصاف کا مذاق اڑانا قرار دیا ہے۔

ولایت پورٹل:سعودی عرب میں جمال خاشقجی کے قتل کے معاملے میں ابتدائی فیصلوں کے بعد سعودی عرب میں من مانی پھانسیوں پر اقوام متحدہ کے خصوصی رپورٹر ایگنس کلمارڈ نے آج ان اقدام کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے انھیں "انصاف کا مذاق" قرار دیا ہے،اپنے ٹویٹر پیج پر انہوں نے لکھا کہ یہ سزا غیر منصفانہ ہے اور اصل قاتلوں کو نہ صرف آزاد اور رہا کیا گیا تھا ، بلکہ ان کی مکمل تحقیقات  بھی نہیں کی گئی ہیں،کلمارڈ نے خاشقجی کے اصل قاتلوں کی استثنیٰ کو سیاسی جبر ، بدعنوانی اور اقتدار کے غلط استعمال کی علامت قرار دیا ہے،انہوں نے مزید کہا  کہ میں اس بات کا اعادہ کرتی ہوں کہ خاشقجی کا قتل بین الاقوامی جرم تھا  اور اسے عارضی یا محض ایک حادثہ قرار نہیں دیا جاسکتا،اسی سلسلہ میں خاشقجی کی منگیتر نے بھی اپنے ٹویٹر پیج پر سعودی عہدہ داروں کو بری کیے جانے کی مذمت کرتے ہوئے اس فیصلہ کو ناقابل قبول قرار دیا ہے،خاشقجی کی منگیتر نے پنے ٹویٹر پیج پر  لکھا ہے کہ سعودی حکومت نے جمال خاشقجی کو پھانسی دینے کا حکم دیا ہے،قابل ذکر ہے کہ سعودی پراسیکیوٹر کے دفتر  کی جانب سے جمال خاشقجی کے قتل پر فرد جرم عائد کیے جانے  کے خلاف  عوامی حقہ میں بہت سارے اعتراضات اٹھائے جارہے  ہیں،یاد رہے کہ سعودی پراسیکیوٹر کے دفتر   نے اعلان کیا تھا کہ ترکی کے کئی عہدہ داروں کے سامنے خاشقجی کیس کی سنوائی ہوئی ہے لیکن ترک حکومت نے آج ایک بیان جاری کیا ہے جس  میں کہا گیا ہے کہ یہ فیصلے ترکی اور عالمی برادری کو قائل کرنے میں ناکام رہے ہیں۔



0
شیئر کیجئے:
फॉलो अस
नवीनतम