Code : 2377 59 Hit

لبنان میں جاری مظاہروں کا تاریک پہلو

لبنان کے ایک اخبار نے اپنی رپورٹ میں لکھا ہے کہ آج کل لبنان میں جاری اعتراضات کے سلسلے میں غلط خبریں ،فلمیں اور ایڈ یٹ کی ہوئی تقریروں پر مشتمل ایک فضا قائم کی جارہی ہے۔

ولایت پورٹل:لبنان کے دارالحکومت بیروت سے شائع ہونے والے انگریزی اخبار ڈیلی اسٹار نے آج لبنان میں ہونے والے مظاہروں کا تاریک پہلو کے عنوان سے ایک رپورٹ شائع کی ہے جس میں کہا گیا ہے کہ 17 اکتوبر سے شروع ہونے والے اعتراضات میں استعمال ہونے والا اصلی وسیلہ  سوشل میڈیا ہے جس نے جہاں ایک طرف لوگوں کے اکٹھا ہونے یا رابطہ برقرار کرنے میں اہم کردار ادا کیا ہے وہیں پر دوسری  طرف  بہت ساری مشکلات بھی ایجاد کی ہیں ،رپورٹ میں مزید آیا ہے کہ پچھلے دو ہفتوں میں لبنانی شہریوں کے موبائل، لیپ ٹاپ اور کمپیوٹرز پر حالات معلوم ہونے کے ساتھ ساتھ تحریف شدہ اورجعلی اخبار کا ایک سیلاب امڈآیا ہےجس میں جعلی تصویروں، ویڈیوز کے ساتھ ساتھ ایڈیٹ شدہ تقریروں  کو بھی  سنایا جا رہا ہے یہاں تک کہ ان میں بہت ساری تصویریں اور ویڈیوز یا تو بہت پرانی ہیں یا دنیا کے کسی کونے میں  اس طرح کے واقعات پیش آئے ہیں جنہیں لبنان کی سڑکوں پر دکھایا جا رہا ہے ،ڈیلی اسٹار نے مزید لکھا ہے کہ مثال کے طور پر بدھ کے دن واٹس ایپ پر ایک بیانیہ آیا جس  کے بارے میں  کہا گیا کہ یہ صدارتی ہاؤس سے آیا ہے اس میں کہا گیا تھا کہ جمعرات کو 12 بجے پورےلبنان میں انٹرنیٹ بند رہے گا لیکن بعد میں معلوم ہوا کہ یہ پیغام جعلی تھا، یا بدھ کی رات ایک اور پیغام آیا جس میں کہا گیا تھا کہ حزب اللہ اور امل تحریک نے فوج سےکہا  ہے کہ آدھی رات کے بعد لبنان کی تمام سڑکوں کو کھول دیا جائے اور دھمکی دی ہے کہ  اگر ایسا نہیں ہوگا تو پورے ملک میں چھٹی ہو جائے گی لیکن  اس کے کچھ ہی دیر کے بعد حزب اللہ کے ذرائع نے ڈیلی اسٹار کو بتایا یہ خبر بالکل غلط ہے،یا بدھ ہی کی رات کو ایک اور پیغام نشر  ہوا کہ ملک کی بحرانی حالت کو دیکھتے ہوئے فوجی سربراہ 31اکتوبر سے ایمرجنسی نافذ کرنے والے ہیں جس کی فوج نے تردید کی اور کہا عوام انھیں خبروں پر توجہ دے جو فوج کی ویب سائٹ سے نشر کی جائیں۔


0
شیئر کیجئے:
फॉलो अस
नवीनतम