امریکہ کو سعودی عرب کے بجائے دوسرے اتحادی تلاش کرنا چاہئے:امریکی دانشور

ایک امریکی محقق کا کہنا ہے کہ سعودی ولی عہد محمد بن سلمان کے اقدامات نے خطے میں اس ملک کا مقام متزلزل کردیا ہے۔

ولایت پورٹل:عربی 21 کی رپورٹ کے مطابق ایک امریکی محقق  انیل شلین نےاپنی ایک رپورٹ میں کہا ہے کہ سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کے اقتدار میں آنے کے بعد سے سعودی عرب کا استحکام اور خطے میں اس کی پوزیشن لرز اٹھی ہے، انہوں نے مزید کہاکہ یمن میں جنگ کی آگ بھڑکانے، قطر کا محاصرہ کرنے ، سعد الحریری کو اغوا کرنے اور لبنان کے وزیر اعظم کے عہدے سے استعفی دینے پر مجبور کرنے اور ملک کے اندر اور باہر سعودی حزب اختلاف کو دبانے سمیت بن سلمان کے اقدامات سے سعودی عرب کی پوزیشن متزلزل ہوگئی ہے۔
امریکی دانشور نے کہا کہ امریکہ اس آمرانہ حکومت کی حمایت کرتا ہے جو خطے میں تشدد اور عدم استحکام پیدا کر رہی ہے،امریکہ اور سعودی تعلقات کو جانچنے کی ضرورت ہے، انہوں نے مزید کہا کہ سعودی عرب اپنی پالیسیوں میں تبدیلی نہ لائے تو امریکہ ریاض کے ساتھ ہتھیاروں کے تمام معاہدوں کو معطل کرے اور دوسرے خطوں میں اتحادیوں کی تلاش کرے ۔
شیلین نے خلیج فارس کے خطے میں بحران کا حوالہ دیتے ہوئے مزید کہا کہ قطر  عرب ممالک کے محاصرے کے باوجود  دوسرے ممالک کی مدد سے اپنی حیثیت برقرار رکھنے اور خوشحالی کی طرف بڑھنے میں کامیاب رہا۔




0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین