امریکہ پر بدعنوان سیاسی نظام حاکم ہے؛امریکی سینٹر کا اعتراف

امریکی سینیٹ کے ایک سینئر رکن نے اپنے ملک میں صحت کے نظام اور ادویات کی تقسیم پر تنقید کرتے ہوئے امریکی سیاسی نظام کو کرپٹ قرار دیا۔

ولایت پورٹل:معروف امریکی سینیٹر برنی سینڈرز نے ٹوئٹر پر اپنے ملک کی صحت کی دیکھ بھال اور ادویات کی تقسیم کے نظام پر شدید تنقید کی اور اسے کرپٹ قرار دیتے ہوئے کہا کہ بڑے پیسوں کے غلبے والے کرپٹ  سیاسی نظام کے ایک حصے کے طور پرڈرگ مافیا سینکڑوں ملین ڈالر لابنگ ، اشتہاری مہمات اور ٹیلی ویژن اشتہارات پر خرچ کرتا ہے کیونکہ یہ چاہتا ہے کہ امریکیوں کو دنیا میں ادویات کی بلند ترین قیمتوں کے ساتھ رہنا چاہیے۔
سینڈرز نے لکھاکہ امریکی شہری پوری  دنیا میں دواؤں کی سب سے زیادہ قیمت ادا کرتے ہیں،یادرہے کہ  اس سے قبل بھی ورمونٹ کے سینٹر برنی سینڈرز نےاس ریاست کی صحت کی دیکھ بھال کے علاج پر تنقید کرتے ہوئے کہاکہ یہ ناقابل قبول ہے کہ ریاستہائے متحدہ میں بہت سے امیرلوگ مزید امیر ہو رہے ہیں جبکہ مزدور طبقے کے خاندان جدوجہد کر رہے ہیں۔
انھوں نے کہا کہ ہم ایک مصیبت زدہ معیشت نہیں چاہتے ، ہمیں پورے معاشرے کے لیے ایک جیسی معیشت کی ضرورت ہے، ورمونٹ کے سینیٹر نے اس کے بعد ملک کے اعداد و شمار فراہم کرتے ہوئے لکھا کہ140 ملین امریکی کم آمدنی والے ہیں اور 92 ملین اپنے واجبات ادا کرنے سے قاصر ہیں۔
 انہوں نے ایک ویڈیو ریلیز میں کہا کہ یہ ہے  امریکہ جہاں 650 ارب پتیوں نے اپنی قسمت میں 1 ٹریلین ڈالر کا اضافہ کیا ہے، قابل ذکر ہے کہ اس وقت باقی دنیا کی طرح امریکہ بھی کورونا بحران سے نبرد آزما ہے اور اس کے ہسپتالوں نے خبردار کیا ہے کہ انہیں ذاتی حفاظتی سامان کی شدید قلت کا سامنا ہے  جو ایک سال میں اپنی کم ترین سطح پر پہنچ گیا ہے۔

0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین