دن بدن بکھرتا امریکہ

امریکہ میں کیے جانے والے ایک حالیہ سروے سے پتہ چلتا ہے کہ ڈونلڈ ٹرمپ کے آدھے سے زیادہ حامی امریکہ سے سرخ ریاستوں کی علیحدگی کی حمایت کرتے ہیں ، جبکہ جو بائیڈن کے 41 فیصد حامی امریکہ سے نیلی ریاستوں کی علیحدگی کے خیال سے متفق ہیں۔

ولایت پورٹل:اسپوٹنک نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق پروجیکٹ ہوم فائر کے ساتھ شراکت میں یونیورسٹی آف ورجینیا پالیسی سینٹر کے ایک سروے کے مطابق ، انہوں نے 300 سے زائد  ایسے سماجی ، سیاسی اور نفسیاتی مسائل  پر مبنی سوالات کے آن لائن جوابات کا تجزیہ کیا جن میں ایک ہزار سے زیادہ ڈیموکریٹک اور ریپبلکن حریفوں نے حصہ لیا تھا ۔
رپورٹ کے مطابق سابق امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے تمام حامی اس خیال سے کسی حد تک متفق ہیں کہ سرخ ریاستیں (ری پبلکن پارٹی کی رنگین علامت ، وہ ریاستیں جہاں زیادہ تر لوگ اس پارٹی کی حمایت کرتے ہیں) کو امریکہ سے علیحدہ ہونا چاہیے، دوسری طرف  امریکی صدر جو بائیڈن کے 41 فیصد حامیوں نے نیلی ریاستوں (ڈیموکریٹس کی علامت کا رنگ) کی علیحدگی کے خیال کی حمایت کی۔
دریں اثنا  محققین کے فراہم کردہ مزید اعداد و شمار سے پتہ چلتا ہے کہ ٹرمپ کے حامیوں کا ایک چوتھائی سرخ ریاستوں کی علیحدگی کے خیال سے سختی سے اتفاق کرتا ہے  جبکہ بائیڈن کے 18 فیصدحامیوں نے نیلی ریاستوں کی علیحدگی کی حمایت کی۔
 ورجینیا یونیورسٹی میں سینٹر فار سیاست کے ڈائریکٹر لیری ساباتو نے ایک بیان میں کہا کہ ٹرمپ کے حامی اور بائیڈن ووٹرز کے درمیان بہت گہرا ، وسیع اور خطرناک فرق ہےجو غیر معمولی ہے اور اسے آسانی سے دور نہیں کیا جا سکتا۔
 اس کے علاوہ  ٹرمپ اور بائیڈن کے حامی ووٹرز میں سے کم از کم 80 فیصد نے کہا کہ اپوزیشن کے منتخب سیاستدان امریکی جمہوریت کے لیے ایک واضح اور موجودہ خطرہ ہیں۔

0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین