صدی ڈیل کی مخالفت نہ کرؤ؛ فلسطینیوں کو امریکہ کی دھمکی

اقوام متحدہ میں امریکی ایلچی نے فلسطینی عہدیداروں اور گروپوں کو خبردار کیا کہ وہ " نام نہاد صدی کے معاہدے" کی مخالفت نہ کریں۔

ولایت پورٹل:روئٹر نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے صدی ڈیل  کے امتیازی اور متنازع سمجھوتے کے منصوبے کو مسلط کرنے کی کوششوں کے بعد واشنگٹن نے اب فلسطینیوں کی جانب سے  اس منصوبے کی مخالفت کرے کے سلسلہ میں انھیں  خبردار کیا ہے۔
رپورٹ کے مطابق اقوام متحدہ میں امریکی نمائندے کیلی کرافٹ نے ہفتے کے روز فلسطینیوں کو متنبہ کیا ہے کہ صدی ڈیل کے خلاف  اقوام متحدہ میں شکایت کرنا محض برسوں پہلے کے ناکام راستے کو دہرا نا ہے۔
کرافٹ نے مزید کہا کہ صدی ڈیل کے بارے میں فلسطینیوں کے ابتدائی ردعمل کی پیش گوئی کی جا سکتی ہے لیکن میں ا ن سے کہنا چاہوں گی کہ آپ مذاکرات میں اس عدم اطمینان کو کیوں نہیں اٹھاتے ہیں؟ اس عدم اطمینان کو اقوام متحدہ میں لانا سات دہائوں قبل ناکام طرز کو دہرانے کے سوا کچھ نہیں  ہے۔
یادرہے کہ اس سے قبل اقوام متحدہ میں فلسطین کے ایلچی نے کہا تھا کہ فلسطینی اتھارٹی کے صدر محمود عباس آئندہ دو ہفتوں میں سلامتی کونسل میں ہونے والے اجلاس کے دوران صدی ڈیل کے منصوبے پر تبادلہ خیال کریں گے اور امید کرتے ہیں کہ اس کے ارکان اس منصوبے کے خلاف قرارداد منظور کریں گے۔
روئٹرز نے امریکی سفارت کاروں کے حوالے سے بتایا ہے کہ صدی ڈیل کے خلاف سلامتی کی کسی بھی قرارداد پر امریکی ویٹو ہوگا لیکن فلسطینی اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں اس منصوبے کے خلاف ووٹنگ کرواسکتے ہیں جس کے بعد معلوم ہوجائے گا کہ کون کون سے ممالک  معاہدے کی مخالفت یا حمایت کرتے ہیں۔
 





0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین