عراق میں امریکی فوج کی موجودگی ہمارے شہریوں کے لئے خطرہ بن چکی ہے:عراقی سیاسی تجزیہ کار

ایک عراقی سیاسی تجزیہ کار نے کہا کہ اس ملک میں امریکی فوج کی موجودگی شہریوں کے لئے خطرہ بن گئی ہےجبکہکچھ داخلی جماعتیں امریکی فوج کو عراق میں رکھنے کی کوشش کر رہی ہیں۔

ولایت پورٹل:المعلومہ نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق عراقی سیاسی تجزیہ کار صباح التائی نے پیر کو عراقی سرزمین پر امریکی فوجیوں کی مسلسل موجودگی کے بارے میں گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ بدقسمتی سے ، عراقی سرزمین پر امریکی فوج کی موجودگی بدستور جاری ہے  اور ایسا لگتا ہے کہ امریکی فوجیوں کی تعداد میں کمی کا مقصد تنقید کرنے والوں کو خاموش کرنا تھا،عراقی سیاسی تجزیہ کار نے یہ بھی کہا کہ آج ہم جس چیز کا مشاہدہ کر رہے ہیں وہ یہ ہے کہ عراق سے امریکی فوجیوں کو انخلا کرنے کی ضرورت پر پارلیمنٹ کی قرارداد پر عمل درآمد نہیں ہوا ہےجبکہ اندرون ملک میں کچھ لوگ امریکی فوجیوں کو یہاں رکھنے کے لئے کام کر رہے ہیں۔
انہوں نے کہا کہ ہمارا کہنا  ہے کہ عراقی سرزمین پر امریکہ کی زیر قیادت غیر ملکیوں کی موجودگی کا خاتمہ ہونا چاہئے، اس کی وجہ یہ ہے کہ ان کی فوجی موجودگی شہریوں کے لئے خطرہ بن گئی ہے، قابل ذکر ہے کہ عراقی پارلیمنٹ کے ممبروں نے شہیدقاسم سلیمانی ، ابو مہدی المہندس" اور ان کے ساتھیوں کے قتل پر مبنی امریکہ کے مجرمانہ فعل کے بعد گذشتہ سال امریکی فوجیوں کو ملک بدر کرنے کے منصوبے کی منظوری دی تھی تاہم اس پر ابھی تک عمل درآمد نہیں ہوسکا ہے جس کے بارے میں کہا جارہا ہے کہ امریکہ اس منصوبے پر عمل درآمد کرنے کی راہ میں رکاوٹ بن رہا ہے جبکہ اس کے بعد ہر عراقی کا مطالبہ ہے ایک بھی امریکی فوجی ان کی سرزمین پر نہیں رہنا چاہیے۔


0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین