Code : 3055 17 Hit

شامی فوج نے صوبہ ادلب میں مزید پانچ علاقوں کو آزاد کرالیا

شامی فورسز کی دہشت گردوں کے خلاف حالیہ کاروائیوں کے نتیجے میں ادلب شہر کے جنوب مغرب میں واقع پانچ دیہات اور علاقے دہشت گردوں کے چنگل سے آزاد ہوگئے ہیں ۔

ولایت پورٹل:دہشت گردوں کی حامی تنظیم شامی ہیومن رائٹس واچ  نے اپنی ایک رپورٹ میں لکھا ہے کہ شامی فوج نے  ملک کے شمال جنوبی شہر ادلب کے مغربی علاقہ میں   کچھ دن کے وقفے کے بعد  آج سے دوبارہ آپریشن شروع کیا ہے جس کے نتیجہ میں کچھ ہی گھنٹوں میں  فوج نے الرکایا،تل النار،کفرسجنہ،الشیخ مصطفی اور النقیر نامی علاقوں کو دہشت گردوں کے چنگل سے آزاد کرا لیا ہے۔
رپورٹ کے مطابق  چار فروری کو صوبہ ادلب میں آپریشن شروع کرنے کے بعد سے شامی فوج کے ذریعہ  آزاد کرائے گئے شہروں ، قصبوں اور دیہات کی تعداد 109 تک پہنچ گئی ہے۔
یادرہے کہ شام کی فوج اور اس کے اتحادیوں نے کچھ دن کے وقفہ کے بعد کل سے صوبہ ادلب کے جنوب میں واقع جبل الزاویہ  علاقے سے دوبارہ کاروائی شروع کردی ہے۔
اس وقفہ کا سبب ترکی اور روس کے درمیان سیاسی سطح پر مذاکرات تھے  تاکہ  انقرہ کو سوچی اور آستانہ معاہدوں کے تحت اپنی ذمہ داریوں کو نبھانے کا موقع فراہم کیا جاسکے ،تاہم یہ مذکرات ناکام رہے۔
واضح رہے کہ شامی فوجیں گذشتہ روز ایم -5شاہراہ کے قریب شہر معرۃ النعمان کے مغرب میں  واقع" شیخ دامس " اور " حنتوتین " دیہاتوں کو آزاد کرانے میں کامیاب ہوگئیں۔
اس علاقہ میں صبح سویرے روسی اور شام کے لڑاکا طیاروں  کی بمباری سے کارروائی شروع ہوئی۔
تاہم  دہشت گردوں نے ان ہتھیاروں سے سخت مزاحمت کی جو انہوں نے حالیہ دنوں میں ترکی سے حاصل کیے تھے۔
یادرہے کہ ترک فوج غیر قانونی طور پر شامی سرزمین پر موجود ہے۔
شامی عہدیداروں نے متعدد بار ترکی کی اس ملک میں موجودگی کو "مجرمانہ" قرار دیا ہے اور اصرار کیا ہے کہ وہ غیر ملکی قبضہ کاروں کو اپنے ملک سےبے دخل کردیں گے۔

0
شیئر کیجئے:
फॉलो अस
नवीनतम