سلامتی کونسل صیہونی دہشتگردی کو روکے:اقوام متحدہ میں پاکستانی سفیر

اقوام متحدہ میں پاکستان کے نمائندے نے مقبوضہ فلسطین میں صیہونی حکومت کے غیر انسانی اقدامات کو روکنے کے لیے سلامتی کونسل کے فیصلہ کن اقدام کی ضرورت پر زور دیا۔

ولایت پورٹل:دنیا نیوز سائٹ کی رپورٹ کے مطابق اقوام متحدہ میں پاکستان کے نمائندے نے مقبوضہ فلسطین میں صیہونی حکومت کے غیر انسانی اقدامات کو روکنے کے لیے سلامتی کونسل کے فیصلہ کن اقدام کی ضرورت پر زور دیا۔
رپورٹ کے مطابق اقوام متحدہ میں پاکستان کے نمائندے منیر اکرم نے سلامتی کونسل کے اجلاس میں مشرق وسطیٰ کی صورتحال کے حوالے سے اپنے خطاب میں کہا کہ فلسطین میں غاصب صیہونی حکومت کی طرف سے انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کو روکنے اور اس سلسلے میں بین الاقوامی قوانین نیز اقوام متحدہ کی قراردادوں کا احترام یقینی بنانے کے لیے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کو فوری اور فیصلہ کن اقدام اٹھانا چاہیے۔
انہوں نے مزید کہا کہ یہ بات کسی سے ڈھکی چھپی نہیں ہے کہ صہیونیوں کی جانب سے آبادکاری کے مقصد سے فلسطینی اراضی پر قبضے، معصوم فلسطینی بچوں، خواتین اور نوجوانوں پر تشدد، غزہ کا محاصرہ اور مسجد الاقصیٰ کی بے حرمتی، سلامتی کونسل اور دفاعی تنظیم کی قراردادوں سمیت انسانی حقوق کے بین الاقوامی قوانین کی سنگین خلاف ورزیاں ہیں۔
پاکستان کے نمائندے نے کہا کہ ہم صیہونی حکومت کے فلسطین پر ناجائز قبضے کے خلاف عالمی عدالت انصاف کی قانونی رائے کا انتظار کر رہے ہیں ، انہوں نے کہا کہ ماضی میں صیہونی حکومت کی کارروائیوں میں بڑی تعداد میں فلسطینی شہید ہوئے ہیں جبکہ غاصبانہ تسلط فلسطین اور مغربی ایشیا میں قیام امن کی راہ میں سب سے بڑی رکاوٹ ہے کیونکہ فلسطینیوں کی آنے والی تمام نسلیں اپنی آزادی اور بنیادی حق خود ارادیت کے لیے جدوجہد جاری رکھیں گی۔
واضح رہے کہ مغربی ایشیائی خطے کی صورتحال کا جائزہ لینے کے لیے سلامتی کونسل کا اجلاس کئی ممالک کی جانب سے فلسطینی عوام کے خلاف صہیونیوں کے غیر انسانی اقدامات پر تشویش کے اظہار اور پاکستان سمیت 90 ممالک کی جانب سے ایک بیان پر دستخط کیے جانے کے بعد منعقد ہوا

0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین