دہشت گردی کے خلاف 20 سالہ امریکی جنگ کے منفی نتائج(ایک تجزیہ)

امریکہ دہشت گردی کی وجوہات کو جاننے میں مسلسل غلطی کر رہا ہےجبکہ آج افریقہ اور مشرق وسطیٰ میں دہشت گرد تنظیمیں نائن الیون سے پہلے کی نسبت زیادہ فعال ہیں۔

ولایت پورٹل:امریکہ کی دہشت گردی کے خلاف 20 سالہ جنگ کے نتائج پر تحقیق کرتے ہوئے  فارن میگزین نے سوال اٹھایا کہ جنگ کس نے جیتی ، امریکہ  نےیا دہشت گردی نے؟ جن محققین نے اس سوال کا جواب دیا ہے ان میں ہارورڈ کی پروفیسر اور دی بن لادن شیٹس کی مصنفہ نیلی لاہود ، بارک اوباما کے نائب قومی سلامتی کے مشیر اور آفٹر فال کے مصنف شامل ہیں، ان کے علاوہ امریکی بننے والی دنیا میں امریکی ہونے کے ناطے ، جارج ٹاؤن یونیورسٹی کے پروفیسر اور دی وے آف دی واریرز کے مصنف ڈینیل بی مین،جہادی فوجوں میں ایلین واریئرز، تھامس ہگ ہیمر ، نارویجین ڈیفنس ریسرچ سینٹر کے محقق ، سنتھیا ملر ادریس، ہیٹ ایٹ ہوم کے مصنف، نیو ٹرانس نیشنل ایکسٹریمسٹ رائٹ اور ایلیٹ اکرمین ، سابق میرین کور اور امریکی انٹیلی جنس افسر نے بھی اس سوال کا جواب دیا ہے۔
 محققین کے جواب کا خلاصہ یہ ہے کہ دہشت گردی کے خلاف 20 سالہ امریکی جنگ نے دہشت گردی کے خاتمے کے اپنے بنیادی ہدف کے حصول کے علاوہ بہت کچھ حاصل کیا ہے اور دہشت گردی نے اپنے مقصد کے حصول کے علاوہ بہت کچھ کیا ہے، دی انڈیپنڈنٹ کے مطابق  بن لادن کے مارے جانے کے بعد پاکستانی شہر ایبٹ آباد سے حاصل کردہ دستاویزات کی بنیاد پر  اس نے 1986 میں فیصلہ کیا کہ اسے امریکہ کو سخت ضرب لگانی چاہیے تاکہ اسے مسلم زمینیں چھوڑنے پر مجبور کیا جائے، امریکہ کے خلاف اپنی منصوبہ بندی میں  اس نے ویت نام جنگ کے خلاف امریکی عوام کے احتجاج پر غور کیا اور امریکی خارجہ پالیسی میں رائے عامہ کے کردار کی امید کی ،تاہم اس بات کو مدنظر نہیں رکھا کہ امریکہ 11/9 کے جواب میں افغانستان پر حملہ کر سکتا ہےجس کا مقصد القاعدہ کو بڑا دھچکا لگانا اور طالبان حکومت کا خاتمہ کرنا ہوگا۔
 بین روڈس کا خیال ہے کہ دہشت گردی کے خلاف جنگ پر توجہ نے امریکہ کی ترجیحات کو تبدیل کر دیا ہے اور دہشت گردی کے خلاف جنگ اپنے اندر متضاد ہو گئی ہے،دہشت گردی پر توجہ مرکوز کرنے کے بجائے ،  11/9 کے بعد کے مرحلے نے دنیا میں امریکہ کے اہداف پر نظر ثانی اور امریکی شناخت کی تعریف کو نئی شکل دینے نیز چینی کمیونسٹ پارٹی کے ساتھ مقابلہ کرنے پر توجہ مرکوز کی۔
 ڈینیل بی مین کی رائے ہے کہ ہمیں دہشت گردی کے ساتھ رہنا سیکھنا چاہیے کیونکہ آج افریقہ اور مشرق وسطیٰ میں دہشت گرد تنظیموں کی سرگرمیاں نائن الیون سے پہلے کی نسبت زیادہ ہیں تو جو ممکن ہے وہ دہشت گردی کے خلاف جنگ کا انتظام ہے نہ کہ دہشت گردی کو تباہ کرنا۔
تاہم حقیقت یہ ہے کہ امریکہ اور اس کے اتحادی ، افغانستان پر حملہ کرنے اور شام اور عراق میں داعش کو شکست دینے کے بعد  دہشت گردوں کو جغرافیائی طور پر بے گھر کرنے اور انہیں ایک محفوظ پناہ گاہ سے محروم کرنے میں کامیاب رہے،تاہم اب دہشت گرد ایشیا سے افریقہ اور یورپ تک ہر جگہ پھیل چکے ہیں اور متعدد حربوں کا استعمال کرتے ہوئے کام جاری رکھے ہوئے ہیں۔

0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین