عراقی صدر اور مراکشی بادشاہ بھی صیہونی جاسوس سافٹ وئر کی زد میں

فرانسیسی ذرائع ابلاغ نے ایک رپورٹ شائع کی ہے جس میں یہ انکشاف کیا گیا ہے کہ شاہ مراکش اور عراق کے صدر کی ٹیلی فون لائن کو بھی اسرائیلی ساختہ جاسوس مالویئر نے ہیک کیا ہے۔

ولایت پورٹل:المیادین چینل کی رپورٹ کے مطابق فرانسیسی سرکاری ریڈیو  اوراخبار لی مونڈے نے ایک رپورٹ شائع کی ہے جس میں انکشاف کیا گیا ہے کہ مراکش کے شاہ محمد ششم اور اس کے رشتہ داروں کے ٹیلی فون صیہونی جاسوسی  سافٹ وئر پیگاسس  کے ذریعہ ہیک کیے گئے ہیں جو جاسوسی سافٹ وئر بنانے والے اسرائیلی انفارمیشن ٹکنالوجی کمپنی کے ذریعہ تیار کیا گیا ہے۔
 رپورٹ کے مطابق  سافٹ وئر کے ڈیٹا بیس میں ایک فون نمبر کا تعلق مراکش کے بادشاہ سے تھاجب کہ کئی مہینوں سے مراکش ان حکومتوں میں سے ایک رہا ہے جس نے ملک کی سیاسی اور عوامی جماعتوں کے احتجاج کے باوجود صہیونی حکومت کے ساتھ تعلقات کو معمول پر لانے کی کوشش کی ہے، اس کے علاوہ ، میڈیا نے دعوی کیا ہے کہ فرانسیسی صدر ایمانوئل میکرون کے موبائل فون کے ساتھ عراقی صدر برہم صالح کے فون کو بھی اسرائیلی کمپنی کے ذریعہ تیار کردہ جاسوس سافٹ وئرنے ہیک کر لیا  ہے۔
واضح رہے کہ متعدد حکومتوں کی طرف سے اپنے مخالفین کی خفیہ معلومات  تک رسائی حاصل کرنےاورا نکی نگرانی کے لئے اسرائیلی ساختہ اسپائی ویئر کے وسیع پیمانے پر استعمال کیے جانے اسکینڈل کے انکشاف کے بعد  پیرس پراسیکیوٹر کے دفتر نے آج صبح اعلان کیا کہ اس اسپائی ویئر کے وسیع پیمانے پر استعمال کا معاملہ شروع ہو گیا ہے۔
 پیرس پراسیکیوٹر کے دفتر نے ایک بیان میں کہا ہے کہ فرانسیسی دارالحکومت کے پراسیکیوٹر نے معلومات کے استعمال ، رازداری کی خلاف ورزی اور جاسوسی کو غیر قانونی طور پر فروخت کرنے کے الزام میں اسرائیلی کمپنی این ایس او کے خلاف قانونی چارہ جوئی کی ہے۔

0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین