ایران چین معاہدہ نے امریکی اور صیہونی سازشوں کو مٹی میں ملا دیا؛ صیہونی میڈیا کا اعتراف

مقبوضہ فلسطین سے شائع ہونے والے ایک صیہونی اخبار نے تہران - بیجنگ اسٹریٹجک دستاویز ایران پر زیادہ سے زیادہ دباؤ کی پالیسی کی ناکامی کا ثبوت قرار دیتے ہوئے لکھا کہ  اس معاہدے سے یہ ظاہر ہوا کہ سخت امریکی پابندیوں کے باوجود ایران گھٹنے ٹیکنے سے بہت دور ہے۔

ولایت پورٹل:صیہونی اخبار ہاریٹز  نےمنگل کی شام ایلون پنکاس کے لکھے گئے ایک مضمون میں ایران اور چین کے مابین اسٹریٹجک دستاویز پر دستخط کا جائزہ لیتے ہوئے کہا ہے کہ یہ معاہدہ تہران کے خلاف امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ اور اسرائیلی وزیر اعظم بنیامین نیتن یاہو کی بورنگ ناکامی کی ایک اور علامت ہے،مضمون کے شروع میں آیا ہے کہ ایران اور چین کے مابین جامع اسٹریٹجک تعاون  امریکی اسرائیل کی خارجہ پالیسی کے نقطہ نظر کی ناکامی کا ثبوت ہے، اس کے علاوہ صہیونی اخبار نے ایران اور چین کی حکمرانی کے دستاویز کی جغرافیائی اہمیت اور صلاحیت کا ذکر  کرتے ہوئے  تشویش کا اظہار کیا اور تہران اور بیجنگ کی اسٹریٹجک دستاویز کا تجزیہ کیا اور کہا کہ  چین اور ایران کے مابین billion 400 بلین $ 25 سالہ معاہدے ، جس میں توانائی اور فوج سے متعلق شقیں شامل ہیں ، امریکہ اور اسرائیل کو کبھی بھی اس  معاہدے ہلکے میں نہیں لینا چاہئے اور نہ ہی اس کو نظرانداز کرنا چاہئے۔
صیہونی تجزیہ کار نے مزید لکھا ہے کہ اگر اس معادے پر مزید دو سال تک بھی  عمل درآمد نہیں ہوتا ہےتب بھی یہ ظاہر کرتا ہے کہ ٹرمپ  کی ایران کےجوہری معاہدے سے یکطرفہ دستبرداری کے بعد کے بعد ایران سخت امریکی پابندیوں کے نتیجے میں امریکہ کے سامنے تسلیم ہونے  سے بہت دور ہے،مضمون میں کہا گیا کہ یہ امریکہ ، یورپ اور اسرائیل کے لئے بھی ایک پیغام ہے کہ ایران کے پاس ایک مضبوط اتحادی ہے جو نیتن یاہو اور ٹرمپ کے ایران کو الگ تھلگ کرنے کے کسی بھی منصوبے کو ناکام بنا سکتا ہے،واضح رہے کہ چین اور ایران دونوں کوامریکہ کو کمزور کرنے میں ذاتی دلچسپی ہے۔
 ایران 140 ممالک میں سے ایک ہے جس نے چین بیلٹ اینڈ روڈ کے بارے میں دوطرفہ مفاہمت کی یادداشت پر دستخط کیے ہیں،یادرہے کہ اسلامی جمہوریہ ایران اور عوامی جمہوریہ چین کے 25 سالہ منصوبے کے نام سے جانے جانے والے جامع تعاون منصوبے کی دستاویز پر ہفتہ کے روز تہران میں دونوں ممالک کے وزرائے خارجہ ، محمد جواد ظریف اور وانگ یی نے دستخط کیے، اس دستاویز میں اسلامی جمہوریہ ایران اور عوامی جمہوریہ چین کے مابین اقتصادی ، ثقافتی سمیت مختلف شعبوں میں دوطرفہ تعاون کی صلاحیتوں اور امکانات پر تبادلہ خیال کیا گیا ہے۔
 بلیومبرگ  سے قبل وال اسٹریٹ جرنل نے یہ اطلاع دی تھی کہ حالیہ برسوں میں بیجنگ ایران کے لئے ایک اہم تجارتی شراکت دار رہا ہے ،اس نے نوٹس لیا کہ ایران اور چین کے مابین اسٹریٹجک دستاویز پر دستخط کرنے سے تہران کو الگ تھلگ کرنے کے امریکی منصوبوں کو ناکام بنانے میں کردار ادا ہوا ہے۔

0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین