بین الاقوامی جوہری ایجنسی کی ایران اور اسرائیل کے ساتھ دوغلی پالیسی:رائے الیوم کی رپورٹ

صہیونی حکومت کے جوہری اقدامات کو نظرانداز کرتے ہوئے ایران کے پرامن جوہری پروگرام پر بین الاقوامی جوہری توانائی ایجنسی کی توجہ قابل اعتراض ہے۔

ولایت پورٹل:آن لائن انٹر ریجنل اخبار رائے الیوم نے الکلمہ الحرہ میگزین کی چیف ایڈیٹر  رعد جبارہ کا لکھا ہوا  ایک مضمون شائع کیا ہے جس  میں انھوں نے  لکھا ہے کہ بین الاقوامی جوہری توانائی ایجنسی کے سربراہ کا تہران کا دورہ بہت اہم ہے اور ایران کی جانب سے 2015 کے جوہری معاہدے پر دستخط کرنے والوں کے لیے آخر موقع ہے،ہمیں پردے کے پیچھے کے معاملات کے بارے میں معلوم ہوا کہ تہران نے رائٹرز نیوز ایجنسی  کے توسط  سے ایران کی جوہری سرگرمیوں کے بارے میں کچھ خفیہ معلومات لیک ہونے کے بارے میں سے IAEA بورڈ آف گورنرز اور اس کے چیئرمین کو احتجاج کا پیغام بھیجا تھا جس کے بعد IAEA نے دعوی کیا ہے کہ  انسپکٹروں سے پوچھ گچھ کی گئی ہے ،واضح رہے کہ اس تنظیم کے قواعد کے مطابق ، ایجنسی کے معائنہ کی کاروائیوں کے بارے میں تمام معلومات کو خفیہ رکھنا چاہئے اور کسی بھی طرح میڈیا میں لیک نہیں ہونا چاہیے جبکہ ہماری معلومات سے پتہ چلتا ہے کہ اس تنظیم میں ایران کے نمائندے کاظم غریب آبادی نے 15 فروری 2021 کو ویانا میں احتجاجی مراسلہ پیش کرکے ایران میں IAEA انسپکٹرز کے اقدامات پر قانونی اور سیاسی اعتراض پیش کیاجس کے بعد  تنظیم کے ڈائریکٹر جنرل  رافیل گروسی نے  ایران کی جوہری توانائی تنظیم کے سربراہ  علی اکبر صالحی اور ایران کے وزیر خارجہ  محمد جواد ظریف سے اس بحران کے خاتمے کے لئے بات چیت کرنے کے لئے ، ایران کا فوری دورہ کیا۔
انھوں نے مزید لکھا ہے کہ بلاشبہ بین الاقوامی جوہری توانائی ایجنسی کے انسپکٹرز کے معائنہ کے نتائج دنیا کے تمام ممالک کے لئے خفیہ رہتے ہیں  اور میڈیا کے توسط سے اس کے بارے میں کوئی معلومات شائع کرنے کی اجازت نہیں ہے لہذا ، تنظیم اور اس کے انسپکٹرز کے اقدامات سے متعلق میکانزم اور قوانین پر نظرثانی کی جانی چاہئے تاکہ اس طرح کی خلاف ورزیوں کا اعادہ نہ ہو اور ایجنسی غیر جانبدار  کردار ادا کرتی رہے، مضمون میں مزید لکھا گیا ہے کہ  مجھے یقین ہے کہ گراسی کا تہران کا فوری دورہ اور اس ملک کے عہدیداروں سے بات چیت کا مقصد درمیانی راہ حل  کا پتہ لگانے اور انسپکٹرز کے دوروں میں رکاوٹ کو روکنے کے مقصد سے کیا گیا ہے تاکہ ایران فریم ورک کے اندر نگرانی سے دور   رہ کر ایٹمی معاہدے اور اضافی پروٹوکول کی اپنی بنیادی سرگرمیاں جاری نہ رکھے۔
تاہم  یہاں دو نکات ہیں: پہلا یہ کہ  بین الاقوامی جوہری توانائی ایجنسی کو اپنی سرگرمیوں پر سیاست بازی  کرنا بند کرنی چاہئے ، تکنیکی امور سے مطمئن رہنا چاہئے ، اور دنیا بھر کے ممالک کے مابین امتیازی سلوک نہیں کرنا چاہئے۔ اگر جوہری توانائی ہر ایک کا حق ہے اور انسپکٹرز کے ساتھ پرامن مقاصد کے لئے یورینیم کی افزودگی کی اجازت ہے تو ، آئی اے ای اے مقبوضہ فلسطین میں اپنی ذمہ داری  کیوں پوری نہیں کر رہی ہے؟ ڈیمونا ری ایکٹر کا دورہ کیوں نہیں کیا جاتا ہے ، جہاں مصنوعی سیارہ کی تصاویر میں 140 میٹر لمبے اور 50 میٹر چوڑے کھدائی والے علاقے میں ری ایکٹر کی تنصیبات کی ترقی، نئی تنصیبات اور سرگرمیوں کی تخلیق کو ظاہر کیا گیا ہے  اور 2018 سے ان تنصیبات  کے معاملات کو ابہام کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ دوسرے یہ کہ  17 ممالک کے ماہرین کی شرکت کے ساتھ ، فسائل مواد کی نگرانی کے لئے بین الاقوامی بورڈ کی کچھ معتبر اطلاعات سے پتہ چلتا ہے کہ ان کے تصویری نمونے غیر معمولی سرگرمی اور دیمونا ری ایکٹر کے آس پاس نئی سہولیات کی تعمیر کو ظاہر کرتے ہیں تاہم بین الاقوامی جوہری توانائی ایجنسی نے ان تنصیبات کا معائنہ کرنے کا کوئی مطالبہ نہیں کیا ہے جبکہ امریکی انٹلی جنس رپورٹس سے پتہ چلتا ہے کہ تل ابیب کے پاس 90 سے زیادہ جوہری ہیڈ ہیڈز ہیں۔

0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین