قیدیوں کو نظرانداز کرنے کے نتیجے میں صہیونی جیلوں میں کشیدگی

صہیونی حکومت کی جانب سے جیلوں میں کورونا کے پھیلاؤ کو روکنے اور فلسطینی قیدیوں کو صفائی سے متعلق حفاظتی اقدامات سےمحروم رکھنے کرنے کی وجہ سے جیلوں میں بحرانی کیفیت پیدا ہوچکی ہے۔

ولایت پورٹل:شہاب نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق فلسطینی قیدیوں سے متعلق خصوصی تحقیقاتی مرکز کا کہنا ہے کہ  صیہونی جیلوں میں قیدیوں کو نظراندازکیے جانے اور کورونا کے خلاف ضروری حفاظتی اقدامات کی عدم فراہمی کے نتیجے میں صہیونی جیلوں کی صورتحال کشیدہ ہے۔
فلسطینی قیدیوں سے متعلق خصوصی تحقیقاتی مرکز کے ترجمان الاشقرکا کہنا ہے اسرائیل میں کورونا وائرس کے خطرے اور تیزی سے پھیلنے کے باوجود  قابض حکومت نے اس بیماری کو جیلوں میں پھیلنے ہونے سے روکنے کے لئے ابھی تک ضروری اقدامات نہیں کیے ہیں اور حراست میں لیے گئے  افراد کے لیے حفاظتی وسائل بھی مہیا نہیں کیےگئے ہیں۔
واضح رہے کہ قابض حکومت نے جیلوں کو صاف ستھرا کرنے اور حفاظتی ذرائع کی فراہمی کا سہارا لینے کے بجائے نظربند افراد پر صابن ، شیمپو ، وغیرہ جیسی چیزوں کیا خریداری پر بھی پابندی عائد کرنے کی ہدایت جاری کی ہیں۔
صیہونیوں نے کورونا پھیلنے کے بہانے قیدیوں کو ان کے اہل خانہ یا وکیلوں سے ملنے سے بھی منع کردیا ہے۔
الاشقر نے تاکید کی کہ فلسطینی قیدی اس طرح کے ہتھکنڈوں سےہتھیار نہیں ڈالیں گے اور قابض حکومت کی جیلوں میں صورتحال بحران کا شکارہے۔
انہوں نے بیمار قیدیوں کی رہائی کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ اگر کورونا جیلوں میں پہنچا تو بیمار قیدیوں ، خواتین ، بچوں اور بوڑھے افراد کو زیادہ خطرہ لاحق ہے۔
الاشقر نے صیہونی حکومت کو قیدیوں کی زندگی اور اس کے نتائج کا ذمہ دار قرار دیتے ہوئے کہا کہ کورونا کے جیل منتقل ہونے کا واحد ذریعہ صہیونی جیلر ہیں کیونکہ قیدیوں کا بیرونی دنیا سے کوئی تعلق نہیں ہے۔

0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین