Code : 922 108 Hit

لیلة الرغائب کی فضیلت اور مختصر اعمال

دینی تعلیمات کی روشنی میں ماہ رجب کی پہلی شب جمعہ کو’’لیلة الرغائب‘‘ کہا جاتا ہے جسے سادہ زبان میں ’’آرزؤوں کے بر آوردہ ہونے کی رات‘‘ بھی کہہ سکتے ہیں۔یعنی انسان اس رات میں دعا و مناجات کرکے اپنی حاجات کو حاصل کرسکتا ہے اور یہی وہ با برکت شب ہے جس میں فرشتگان الہی زمین پر نازل ہوتے ہیں۔آج کی رات بہت اہم ہے اگر کوئی شخص یہ محسوس کرتا ہے کہ اس کے اندر معنویت اور دینداری کا رجحان کم ہوگیا ہے تو اسے جان لینا چاہیئے کہ اللہ تعالٰی نے اپنے بندوں پر لطف و عنایت کرتے ہوئے اس مبارک و میمون شب کو معنویت و روحانیت میں اضافہ کے لئے مخصوص قرار دیا ہے۔

ولایت پورٹل: قارئین کرام! دینی تعلیمات کی روشنی میں ماہ رجب کی پہلی شب جمعہ کو’’لیلة الرغائب‘‘ کہا جاتا ہے جسے سادہ زبان میں ’’آرزؤوں کے بر آوردہ ہونے کی رات‘‘ بھی کہہ سکتے ہیں۔یعنی انسان اس رات میں دعا و مناجات کرکے اپنی حاجات کو حاصل کرسکتا ہے اور یہی وہ با برکت شب ہے جس میں فرشتگان الہی زمین پر نازل ہوتے ہیں۔
آج کی رات بہت اہم ہے اگر کوئی شخص یہ محسوس کرتا ہے کہ اس کے اندر معنویت اور دینداری کا رجحان کم ہوگیا ہے تو اسے جان لینا چاہیئے کہ اللہ تعالٰی نے اپنے بندوں پر لطف و عنایت کرتے ہوئے اس مبارک و میمون شب کو  معنویت و روحانیت میں اضافہ کے لئے مخصوص قرار دیا ہے۔لہذا جو افراد رجب المرجب کے اس بحر بیکراں سے معنویت اور روحانیت کے موتی تلاش کرنا چاہتے ہیں وہ اس ظریف نکتہ پر ضرور توجہ ضرور دیں کہ آج کی شب یعنی’’ لیلة الرغائب‘‘ میں  میل و رغبت کے ساتھ  منقول اعمال کو بجالانے کے ساتھ ساتھ ولایت امیرالمؤمنین(ع) کی حرارت اور آپ کے عشق کی لذت سے بھی ضرور بہرہ مند ہوں کہ جس کا ثمرہ یہ ہوگا کہ اس رات کے اعمال سے فارغ ہوکر انسان یہ محسوس کرے گا کہ امیرالمؤمنین(ع) سے اس کا عشق اور محبت چند برابر ہوگئی ہے چونکہ ماہ رجب کی حقیقت ہی ولایت امیرالمؤمنین میں مجسم ہوتی ہے۔
اس شب کا ایک مخصوص عمل جو رسول اللہ(ص) سے نقل ہوا ہے اور جسے انجام دینے کی بڑی فضیلت منقول ہے:
اگر انسان کے لئے ممکن ہو تو روزہ رکھے(اگرچہ ماہ رجب المرجب میں روزہ رکھنے اور شب بیداری کرنے کی بڑی تأکید ملتی ہے) اور جیسے ہی شب جمعہ کا آغاز ہو تو نماز مغرب و عشاء کے درمیان 12 رکعت نماز پڑھے کہ جس کی ہر دوسری رکعت پر سلام ہو اور ہر رکعت میں ایک مرتبہ سورہ حمد اور تین مرتبہ سورہ قدر(انا انزلناہ فی لیلۃ القدر) اور 12 مرتبہ سورہ توحید(قل؛ھو اللہ احد) پڑھی جائیں۔
اور جیسے یہ  12 رکعات نماز تمام ہو تو بلا فاصلہ 70 مرتبہ یہ ذکر’’ اللهم صل علی محمد النبی الامی و علی آله‘‘ پڑھا جائے۔
اس کے بعد سجدہ میں جاکر 70 مرتبہ’’سبوح قدوس رب الملائكة والروح‘‘پڑھا جائے۔
سجدہ سے فارغ ہونے کے بعد 70 مرتبہ’’رب اغفر وارحم و تجاوز عما تعلم انك انت العلی الاعظم‘‘ پڑھا جائے۔
اور پھر اس کے بعد اللہ کی بارگاہ میں اپنی حاجات کو پیش کیا جائے اور دعا کی جائے ۔البتہ تمام دعاؤں میں سب سے افضل دعا امام زمانہ(عج) کے ظہور میں تعجیل کے لئے دعا کرنا ہے۔انشاء اللہ دعا ضرور مستجاب ہوگی۔
اس مختصر سے عمل کی فضیلت
پیغمبر اکرم(ص) اس نماز اور عمل کی فضیلت کے بارے میں ارشاد فرماتے ہیں:
جو شخص اس نماز کو پڑھے گا تو خداوند عالم اس کی قبر میں پہلی ہی رات اس نماز کے ثواب کو بہترین صورت اور شکل اور فصیح زبان سے آراستہ کرکے اس کے پاس بھیجے گا اور یہ نماز اس سے کہے گی: اے میرے حبیب!تجھے بشارت ہو کہ اب تجھے ہر شدت و سختی سے نجات مل گئی ہے۔
میت اس سے سوال کرے گی تو کون ہے؟ خدا کی قسم میں نے آج تک تجھ جیسا حسین و جمیل نہیں دیکھا اور تجھ سے زیادہ شریں سخن اور خوش کلام کو نہیں سنا اور تجھ سے زیادہ معطر خوشبو کو استشمام نہیں کیا۔
وہ خوبصورت موجود جواب دے گی: میں تیری اس نماز کا ثواب ہوں کہ جو تونے نے فلاں مہینہ کی فلاں شب میں پڑھی تھی اور میں آج کی رات تیرے پاس اس لئے آئی ہوں تاکہ تیرے حق کو ادا کرسکوں اور تیری تنہائی کی مونس بن جاؤں اور وحشت قبر کو دور کردوں اور جب قیامت کے لئے صور پھونکا جائے گا تو میں تیرے سر پر سایہ بن کر ساتھ ساتھ رہوں گی۔
قارئین کرام! آج کی شب کی قدر کیجئے اور شب بیداری اور دعا و استغفار میں مصروف رہیئے اور ایک دوسرے کے لئے دعا کیجئے کہ اللہ تعالٰی بڑا رحم کرنے والا اور مہربان ہے۔

التماس دعا



0
شیئر کیجئے:
फॉलो अस
नवीनतम