متحدہ عرب امارات اور بحرین کے بعد سوڈان بھی اسلامی امت کے غداروں کی فہرست میں شامل

متحدہ عرب امارات اور بحرین کے بعد سوڈان نے بھی اسرائیل کے ساتھ تعلقات کو معمول پر لانے پر اتفاق کرلیا جس کے ساتھ ہی امریکہ نے سوڈان کا نام دہشتگردی کی سرپرستی کرنے والے ممالک کی فہرست سے نکال دیا۔

ولایت پورٹل:متحدہ عرب امارات اور بحرین کے بعد سوڈان نے بھی اسرائیل کے ساتھ تعلقات کو معمول پر لانے پر اتفاق کرلیا جس کے ساتھ ہی امریکہ نے سوڈان کا نام دہشتگردی کی سرپرستی کرنے والے ممالک کی فہرست سے نکال دیا۔
اس بات کا اعلان ڈونلڈ ٹرمپ نے وائٹ ہاؤس میں کیا۔ انہوں نے میڈیا کے سامنے سوڈان کے وزیراعظم عبداللہ حمدوک، فوجی کونسل کے سربراہ عبدالفتاح البرہان اور اسرائیلی وزیراعظم بنجمن نتن یاہو کو فون پر ساتھ لیا اور اس معاملے پر گفتگو کی۔
اس ٹیلی فونک ملاقات کے بعد تینوں ممالک کے مشترکہ اعلامیے میں کہا گیا کہ سوڈان اور اسرائیل کے سربراہان تعلقات کو بحال کرنے اور ایک دوسرے سے دشمنی کو ختم کرنے پر آمادہ ہوگئے، جلد ہی تینوں ممالک کے وفود ایک دوسرے سے ملاقاتیں کریں گے۔ اسرائیلی وزیراعظم نتن یاہو نے اس اعلامیے کو امن کے لیے ڈرامائی پیشرفت اور نئے دور کا آغاز قرار دیتے ہوئے ٹرمپ کا شکریہ ادا کیا۔
امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے سوڈان کا نام دہشتگردوں کی سرکاری طور پر سرپرستی کرنے والے ممالک کی فہرست سے نکال کر اس کی امداد بھی بحال کردی۔ سوڈان کے وزیراعظم عبداللہ حمدوک نے اس پر ٹرمپ کا شکریہ ادا کیا۔ ڈونلڈ ٹرمپ نے ایک بار پھر سعودی عرب پر بھی اسرائیل کے ساتھ تعلقات کو معمول پر لانے پر زور دیتے ہوئے کہا کہ مزید 5 عرب ممالک بھی اسرائیل کے ساتھ تعلقات بحال کرنے والے ہیں۔
دوسری طرف حماس اور فلسطینی اتھارٹی نے سوڈان کے اس فیصلے کی مذمت کرتے ہوئے اسے سیاسی گناہ قرار دیا، جبکہ مصر کے صدر جنرل الفتاح السیسی نے اس فیصلے کا خیر مقدم کیا ہے۔ اسرائیل سے تعلقات کی بحالی کیخلاف سوڈان کے دارالحکومت خرطوم سمیت ملک بھر میں احتجاجی مظاہرے ہوئے جس میں اسرائیلی پرچم نذر آتش کیے گئے۔
مہر

0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین