Code : 2371 82 Hit

کامیاب دوستی

وہ دوست جو زندگی کے سخت مراحل میں بہترین مددگار ہوں اور جب ہم غائب ہوں وہ ہمارے ناموس، آبرو اور حیثیت کی حفاظت کریں اور مرتے وقت اور یہاں تک کہ موت کے بعد بھی وہ ہمیں فراموش نہ کریں یہی وہ افراد ہیں جو امیرالمؤمنین(ع) کی حدیث کی روشنی میں سچے دوست ہیں اور ان پر ہی یہ مذکورہ اصول صادق آتا ہے۔ اور واقعاً کتنا بہتر ہے کہ مؤمن آدھے راستہ کا دوست نہ ہو بلکہ اپنے دوستوں کو موجودگی یا عدم موجودگی اور یہاں تک کے ان کے مرجانے کے بعد بھی اس عہد و پیمان کو نبہائے،کبھی اس کے لئے خیرات دے اور کبھی مغفرت طلب کرے اور اسے اپنے اعمال خیر اور نیک کاموں میں شریک کرتا رہے۔

ولایت پورٹل: قارئین کرام! دوستی،رفاقت انسانی زندگی کی ایک بنیادی ضرورت ہے۔ایک بامقصد زندگی میں ایک اچھے اور معتبر دوست کا وجود ناگزیر ہے لہذا حقیقی دوست کون ہے ؟ اس کے لئے ہمیں امیرالمؤمنین کے کلام سے ایک اصول ملا جس میں آپ کا ارشاد ہوتا ہے:’’لَا یَکُونُ الصَّدِیقُ صَدِیقاً حَتَّی یَحْفَظَ أَخَاهُ فِی ثَلَاثٍ فِی نَکْبَتِهِ وَ غَیْبَتِهِ وَ وَفَاتِهِ‘‘۔(نہج البلاغہ:حکمت 129)
حقیقی دوست وہ ہے جو اپنی دوست و رفاقت کا ان 3 مواقع پر خیال رکھے:1۔سختی اور بلاؤں میں 2۔ دوست کی عدم موجودگی میں 3۔ اور اس کی موت کے وقت۔
حدیث کی تشریح:
دوستی اور رفاقت اس وقت معتبر سمجھی جاتی ہے جب اس میں دوام پائداری اور سچائی پائی جائے۔ یہی وجہ ہے کہ اگر انسان دوستی کے اصولوں کی رعایت کرے تو وہ دوست کے لئے بہترین بھائی بلکہ بھائی سے بھی افضل، قریب اور معتبر سمجھا جاتا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ ایک مقام پر امام علی علیہ السلام اس قربت کی طرف اس طرح اشارہ  فرماتے ہیں:’’الصَّدیِقُ اَقرَبُ الاَقارِبِ‘‘۔ دوست اپنوں سے بھی زیادہ نزدیکی اور قریبی ہوتا ہے‘‘۔(غرر الحکم 674)
چونکہ وہ دوست جو زندگی کے سخت مراحل میں بہترین مددگار ہوں اور جب ہم غائب ہوں وہ ہمارے ناموس، آبرو اور حیثیت کی حفاظت کریں اور مرتے وقت اور یہاں تک کہ موت کے بعد بھی وہ ہمیں فراموش نہ کریں یہی وہ افراد ہیں جو امیرالمؤمنین(ع) کی حدیث کی روشنی میں سچے دوست ہیں اور ان پر ہی یہ مذکورہ اصول صادق آتا ہے۔ اور واقعاً کتنا بہتر ہے کہ مؤمن آدھے راستہ کا دوست نہ ہو بلکہ اپنے دوستوں کو موجودگی یا عدم موجودگی اور یہاں تک کے ان کے مرجانے کے بعد  بھی اس عہد و پیمان کو نبہائے،کبھی اس کے لئے خیرات دے اور کبھی مغفرت طلب کرے اور اسے اپنے اعمال خیر اور نیک کاموں میں شریک کرتا رہے۔
 


0
شیئر کیجئے:
फॉलो अस
नवीनतम