Code : 2278 135 Hit

عراق میں جاری مظاہرین کے متعلق عراقی کابینہ کے کچھ اہم فیصلے

عراق میں کسی حد تک مظاہروں پر کنٹرول کیا جا چکا ہے تاہم یہاں کی پارلیمنٹ کے اجلاس کے بعدگورنمنٹ نے ہنگامی اجلاس بلایا اورکچھ اہم فیصلے کیے۔

ولایت پورٹل:عراق میں پچھلے پانچ دن سے جاری مظاہروں میں آج کسی حد تک سکون نظر آرہا ہے ، شروع کے دنوں کا شور شرابا اور آشوب  دیکھنے کو نہیں مل رہا ہے، تاہم عراقی حکام نے بھی پارلیمنٹ اجلاس کے بعد فوری طور پراجلاس بلایا جس میں عوام کی  فلاح و بہبود کے لئے کچھ اہم فیصلے کیےگئے ، عراقی حکومت نے عادل عبد المہدی کی سربراہی میں کل رات کا بینہ کا  ایک اہم جلسہ منعقد کیا ، جس میں مظاہرین کے مطالبات کو پورا  کرنے کے سلسلے میں کچھ اہم اقدام اٹھائے گئے جن میں سے خاص طور پر غریب گھرانوں کے لئے مکانات کی تعمیر اور بیروزگاری کو کم کرنے کے لیے کچھ فیصلے کیے گئے ،عراقی حکومت نے اجلاس میں پاس کیا کہ  غریب گھرانوں کے لیے  بصرے میں ستر ہزار مکان بنانے کے گورنمنٹ کی طرف سے چلنے والے پروجیکٹ  کو چار ہفتوں میں مکمل ہوجانا چاہیے، کابینہ نے اپنے ہنگامی اجلاس میں یہ بھی پاس کیا کہ عراق کے قومی پروجیکٹ کے تحت ایک لاکھ مختلف ریاستوں میں ایک لاکھ گھروں کی تعمیر کے منصوبہ کو فوری طور پر عملی جامہ پہناتے ہوئے اس پر کام شروع کر دیا جائے اور اس میں پسماندہ علاقوں کی ترجیح دی جائے ، اسی طرح 3مہینے کے اندر 15000 ایسے بے روزگار افراد کو  جوکام نہیں کر سکتے  ایک لاکھ 75 ہزار دینار دیے جائیں،وزارت دفاع کو بھی حکم دیا گیا کہ وہ 18 سال سے 25 سال تک کے جوانوں کو فوج میں بھرتی کرنے کا اپنا وعدہ پورا کرے اس کے علاوہ پارلیمنٹ نے یہ بھی پاس کیا کہ حالیہ  مظاہروں کے دوران مرنے والے افراد چاہیے وہ مظاہرین میں سے ہوں یا سلامتی دستوں کے جوان ہوں ،سب کو شہید کا رتبہ دیا جائے اور انھیں شہداء کے وارثوں جیسی سہولیات فراہم کی جائیں ۔

0
شیئر کیجئے:
फॉलो अस
नवीनतम