بعض عرب حکومتیں اسرائیل کے ساتھ تعلقات ہی میں اپنی بقا سمجھتی ہیں

حماس اسلامی مزاحمتی تحریک کے ایک رکن نے صیہونی حکومت کے ساتھ عرب رہنماؤں کے تعلقات معمول پر لانے کی کوششوں پر ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے کہاکہ کچھ عرب حکومتیں تل ابیب کے ساتھ تعلقات کو معمول پر لانے میں ہی اپنی بقا کو دیکھتی ہیں۔

ولایت پورٹل:فلسطین الیوم کی رپورٹ کے مطابق فلسطین کی اسلامی مزاحمتی تحریک حماس کے ایک ممبر ماہر صلاح نے صیہونی حکومت کے ساتھ عرب رہنماؤں کے تعلقات معمول پر لانے کی کوششوں کے بارے میں بات کرتے ہوئے کہا کہ کچھ عرب حکومتیں ، کسی بھی طرح صیہونی دشمن کے ساتھ تعلقات کو معمول پر لانے کی کوشش کرتی ہیں ، کیونکہ وہ اس کام میں اپنی بقا اور سلامتی کو دیکھتے ہیں۔
صلاح نے کہا کہ کچھ عرب حکومتوں کا خیال ہے کہ قابض صہیونی حکومت کے ساتھ تعلقات معمول پر لانے سے وہ اپنی طاقت اور خودمختاری کے تسلسل کو مستحکم کرسکتی ہیں۔
حماس تحریک کے اس رکن نے یہ کہتے ہوئے کہ  صہیونی دشمن کے ساتھ تعلقات کو معمول پر لانے کے معاملے کا کوئی مستقبل نہیں ہے، تاکید کی کہ اس سمت میں کوئی بھی اقدام یا کوشش امت کے ساتھ غداری اور اس کے موقف اور مفادات کے خلاف اقدام ہے۔
انھوں نے مزید کہا کہ عالمی سطح پر صیہونی حکومت کے بائیکاٹ کی تحریکیں دن بدن بڑھتی جارہی ہیں۔



0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین