Code : 4405 2 Hit

عراقی جیل سے دہشگردوں کو فرار کرانے کا سعودی صیہونی منصوبہ

ایک عراقی پارلیمنٹ ممبر نےاس ملک کے صوبہ ذی قار میں انتشار پیدا کرنے اور’’الحوت ‘‘ جیل سےسعودی-اماراتی دہشت گردوں کو نکالنے کے سعودی صہیونی منصوبے پر متنبہ کیا۔

ولایت پورٹل:المعلومہ نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق عراقی پارلیمنٹ اتحاد الصادقون کے رکن عبد الامیر تعیبان نے آج اپنے ایک بیان میں سعودی عرب ،متحدہ عرب امارات اور صیہونیوں کوذی قار صوبہ کے الناصریہ شہر میں کچھ عناصر کو اکسانے  اور اپنے ناپاک منصوبوں پر عمل درآمد کرنے کے لیے اس شہر میں افراتفری پھیلانے کا ذمہ دار قرار دیا۔
انہوں نے وضاحت کی کہ سعودی عرب ، متحدہ عرب امارات اور اسرائیل جیسے ممالک چھپے ہوئے اور پردے کے پیچھے سے صوبہ ذی قار کے کچھ گروہوں اور رہائشیوں  کو پیسہ دیتے ہیں تاکہ اس صوبے کے امن کو بگاڑ کر سکیں،عراقی نمائندہ نے صوبہ ذی قار کے مرکز میں انتشار آگ بھڑکانےکے بنیادی مقصد کے بارے میں بات کرتے ہوئے اور عوامی مظاہروں کے رخ کو موڑنے کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ الناصریہ  میں جو کچھ ہورہا ہے اس کی وجہ اس شہر میں الحوت جیل کا وجود ہےجس میں سعودی اور اماراتی قیدیوں کی ایک بڑی تعداد موجود ہے  اور یہ تشویشناک ہے۔
انہوں نے مزید کہاکہ ذی قار صوبے میں کچھ گروپ قابو سے باہر ہیں جو بغیر کسی رکاوٹ کے اور آسانی سےنقل و حرکت کرتے ہیں جبکہ وزیر اعظم مصطفیٰ الکاظمی صرف تماشا دیکھ رہے ہیں اس لیے کہ ان کی حکومت تشریفاتی ہے  جس کو کچھ بچے چلا رہے ہیں۔
یادرہے کہ اس سے قبل بھی مذکورہ عراقی نمائندے نے کہا تھا کہ سعودی اماراتی  حکام عوامی مظاہروں کے ذریعہ ذی قار صوبے کو تباہ کرنے اور الناصریہ میں انتشار پیدا کرکے دہشت گردوں کو الحوت جیل سے فرار کرانے کا منصوبہ بنا رہے ہیں۔

0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین