Code : 4387 6 Hit

سوڈان پر سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات کا تل ابیب کے ساتھ سمجھوتہ کرنے کے لیےدباؤ

سوڈانی سفارت کاروں نے انکشاف کیا ہے کہ متحدہ عرب امارات اور سعودی عرب صیہونی حکومت کے ساتھ سمجھوتہ کرنے کے لئے سوڈانی حکومت پر دباؤ ڈال رہے ہیں تاکہ امریکی صدر کو ملک کے صدارتی انتخابات میں حصہ لینے میں مدد ملے۔

ولایت پورٹل:العربی الجدید ویب سائٹ نے آج (ہفتہ کے روز) سوڈانی سفارت کاروں کے حوالے سے اطلاع دی ہے کہ ابو ظہبی کے ولی عہد شہزادہ محمد بن زائد اور ان کے سعودی ہم منصب محمد سلمان صیہونی حکومت کے ساتھ تعلقات معمول پر لانے کے لئے سوڈان کو راضی کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔
رپورٹ میں سوڈانی متعدد سفارتکاروں کے حوالے سے بتایا گیا ہے کہ سوڈانی عوام اور دانشوروں کی مخالفت کے باوجود متحدہ عرب امارات اور سعودی عرب خرطوم کے فیصلہ سازوں پر بہت زیادہ دباؤ ڈال رہے ہیں تاکہ اس ملک کو تل ابیب کے ساتھ سمجھوتہ  مہم میں شامل کریں۔
ذرائع نے انکشاف کیا ہے کہ ابو ظہبی اور ریاض سوڈان کے تباہ کن معاشی بحران کا فائدہ اٹھانے کی کوشش کر رہے ہیں اور اس ملک میں آنے والے سیلاب  کی تباہی جس نے تقریبا 10 لاکھ افراد کو بے گھر کردیا ہےکی آڑ میں اس ملک کی حکمراں جماعت کو اسرائیلی غاصبوں کے ساتھ تعلقات معمول پر لانے کے لئے مجبور کریں۔
ذرائع نے مزید بتایا کہ عبوری حکومت کے وزیر اعظم "عبد اللہ حمدوک" نے متعدد غیر علنی فون کے ذریعہ کہا ہے  کہ وہ اس کارروائی میں حصہ نہیں لے سکتے ہیں کیونکہ ان کی حکومت بحرانوں کے وقت بننے والی اور عبوری حکومت ہے جو اس طرح کے فیصلہ کن فیصلے کرنے کا اختیار نہیں رکھتی ہے لیکن ساتھ ہی انہوں نے کہا ، سوڈانی حکمراں کونسل ایسا کرنے کا فیصلہ کر سکتی ہے۔
العربی الجدید کے مطابق  ‌ یہ وہی موقف ہے جو حمدوک نے امریکی وزیر خارجہ مائک پومپیو کے حالیہ دورہ خرطوم کے دوران بیان کیا تھا۔



0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین