Code : 2723 71 Hit

حملے بند نہیں کرؤ گے تو دندان شکن جواب دیا جائے گا؛یمنی فوج کو سعودی اتحاد کو انتباہ

یمنی فوج ، جس نے یمن کی اعلیٰ سیاسی کونسل کے سربراہ کے اقدام پر تین ماہ سے زیادہ عرصے تک سعودی اتحاد کے حملوں کا جواب نہیں دیا تھا ، نے رواں ہفتے نجران پر راکٹ فائر کیے اور سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات میں نو بڑے اہداف کا اعلان کیا ہے۔

ولایت پورٹل:یمنی سپریم پولیٹیکل کونسل کے سربراہ  مہدی المشاط نے 29ستمبر کو سعودی عرب کے خلاف یمنی فوج کی میزائل انتقامی کارروائیوں کو مشروط طور پر روکنے کا اعلان کیا تھا اور امید ظاہر کی تھی کہ ریاض بھی اپنے حملوں کوخاتمہ دے دے گا،یمن کی فوج اور نچلی سطح کی کمیٹیوں نے اس وقت سے لے کر اب تک جارح اتحاد کے خلاف اپنی کاروائیاں بند رکھی ہیں،تاہم یمن کی مسلح افواج کے ترجمان یحیی سریع نے رواں ہفتے ایک نیوز کانفرنس میں متنبہ کیا تھا کہ اگر سعودی اتحاد حملے جاری رکھے تو یمنی فوج بھی اپنے حملے پھر سے شروع کردے گی،یادرہے کہ سریع نے حال ہی میں سعودی عرب میں "چھ بڑے اہداف" اور متحدہ عرب امارات میں "تین اہداف" کو نشانہ بنانے کا اعلان کیا،یمن کی سپریم پولیٹیکل کونسل کے رکن محمد ناصر البخیتی نے الجزیرہ چینل  کو یمنی فوج کی جانب سے دوبارہ انتباہ دینے  کی وجہ کے بارے میں بتاتے ہوئے کہا کہ یہ ان کی ذمہ داری ہے کہ وہ یمنی سرزمین کے چپہ چپہ کو آزاد کروائیں اور یہ کہ وہ ایک اپنے ملک میں موجود کسی بھی غیر ملکی طاقت کے ساتھ قبضہ کرنے والا سلوک کریں،انھوں نے مزید کہا کہ  ہماری طرف سے یکطرفہ سیز فائر کے اقدام کا مقصد سعودی عرب اور متحدہ  امارات کو جنگ روکنے کے لئے حوصلہ افزائی کرنا تھا اور انھیں عزت کے ساتھ جنگ سے نکلنے کا موقع فراہم کرنا تھا،لیکن انہوں نے اس موقع کوجنگ کے قواعد تبدیل کرنے کے لیے استعمال کیا  اورپہلے سے بھی زیادہ منظم طریقہ سے بمباری شروع کی لیکن اب اگروہ یمن  کےخلاف اپنی کارروائیاں ختم نہیں کرتے تو انھیں دندان شکن جواب دیا جائے گا۔
 


0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین