Code : 2670 27 Hit

دنیا کی دوسری بڑی نیوز ایجنسی کے ایران کے خلاف جھوٹ

روئٹرز نیوز ایجنسی ایرانی معیشت کے خلاف روزانہ50 جھوٹی خبریں پیش کررہی ہے۔

ولایت پورٹل:کچھ میڈیا ماہرین کے مطابق روئٹرز  دنیا کی دوسری بڑی خبررساں ایجنسی ہے جس کا اپنا اصول نامہ موجود ہے جس میں اس تنظیم کے تمام ممبروں کو عالمی سطح پر رونما ہونے والے  اہم واقعات سے متعلق رپورٹ پشی کرتے ہوئے  منابع اور ذرائع کا مکمل نام اور پتا دینا ہوتا ہے،اس ضابطہ میں نامعلوم ذرائع کا حوالہ دینے کی اجازت صرف آخری حربے کی صورت میں اور وہ بھی فقط معمولی معاملات میں ، جبکہ اس کے ساتھ اس بات پر بھی زور دیا گیا کہ یہ ذرائع رپورٹنگ کا سب سے زیادہ  ناقابل اعتبار ذریعہ ہیں،لیکن جب بات ایران کے خلاف خبر کی ہو تو رائٹرز اپنے ہی بنائے ہوے ان  اصولوں کو پیروں تلے روندھ دیتی ہے ،یادرہے کہ اس سے قبل بھی  ایجنسی کی جانب سے ایران کے خلاف خبروں کو توڑ موڑ کر پیش کرنے پر مختلف ایرانی  ماہرین اور عہدیدار ں کی طرف سے  تنقید کی جاچکی ہے ،اس طرح سے کہ ایرانی وزیر خارجہ محمد جواد ظریف  جنھوں نے ہمیشہ غیر ملکی میڈیا سے متوازن رویہ اختیار کرنے کی کوشش کی ہےایسی بے بنیاد خبروں کے بارے میں خاموش نہیں رہ سکے،انھوں نے پچھلے سال 3 جولائی کو کہ روئٹرز نیوز ایجنسی ایرانی معیشت کے خلاف روزانہ50 جھوٹی خبریں پیش کررہی ہے،واضح رہے کہ سامعین کو یقین دلانے کے لیے اس نے کئی بار بڑی مقدار میں حق اور باطل کو آپس میں مخلوط کیا ہے  اور اس کا سلسلہ جاری رکھتے ہوئے اس ایجنسی نے  کل (پیر) کو "اسپیشل رپورٹ" کے نام سے ایک کہانی  گڑھی ہے جس میں کئی غلط دعووں میں ایک  دعوی  یہ بھی کیا  ہے کہ ایران کے کچھ شہروں میں حالیہ شورش میں1500کے قریب افراد ہلاک ہوئے ہیں ،مذکورہ  خبر رساں ادارے نے یہ  دعوی کیا ہے کہ یہ اعداد و شمار ایرانی وزارت داخلہ کے تین عہدیداروں کی طرف سے سامنے آئے ہیں ، لیکن اس  نے  ان کا نام نہیں بتایا،جبکہ اسی نیوز ایجنسی نے  16 دسمبر کی اپنی  ایک رپورٹ میں کہا تھا کہ شورش میں 300کے قریب افراد ہلاک ہوئے ہیں۔

0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین