Code : 2580 48 Hit

امیر قطر کی ریاض کے اجلاس میں شرکت نہ کرنے کی وجوہات(ایک تجزیہ)

قطر کے امیر نے سعودی بادشاہ کی دعوت کے باوجود ، افریقی ملک جانے اور کل ریاض میں شرکت نہ کرنے کو ترجیح دی ہے۔

ولایت پورٹل:میڈل ایسٹ مانیٹر ویب سائٹ کے مطابق قطر کےامیر تمیم بن حمد آل ثانی پیر کو روانڈا روانہ ہوگئے جب کہ سعودی بادشاہ نے انھیں ریاض میں منعقد ہونے والے  خلیج تعاون کونسل کے سربراہی اجلاس میں شرکت کی دعوت دی تھی،قطر کے امیر بدعنوانی کے خلاف جنگ کے لئے مختص کیگالی روانڈا کی بین الاقوامی ایوارڈ تقریب میں شرکت کریں گے،اس سے قبل قیاس آرائیاں کی جارہی تھیں کہ جون 2017سےقطر اور سعودی عرب کے مابین شروع ہونے والے بحران کمی آئی ہے  پھر شاہ سلمان کی جانب سے امیر قطر کو دی جانے والی دعوت نے بھی اس امکان کو بڑھا دیا ہے ، لیکن قطر کےامیر تمیم بن حمد آل ثانی  کا ریاض نہ جانا اس بات کی طرف اشارہ ہے کہ حالات معمول کے مطابق نہیں ہیں،مذکورہ رپورٹ کے مطابق ، قطر کا محاصرہ اٹھائے  بغیر ، ریاض میں ہونے والی خلیج تعاون کونسل کی سربراہی کانفرنس میں امیر قطر کی شرکت کے بارے میں کوئی بھی بات قبل از وقت ہے ،ابھی کچھ معاملات حل طلب ہیں ،کوئی بھی پابندی اٹھائے جانے کے  بغیر امیر قطر کا ریاض میں ہونا پابندیوں کے حق بجانب ہونے کی علامت شمار کیا جائے گا،دوسری طرف  جیسا کہ میڈل ایست مانیٹر کا کہنا ہے  اگر بحران کے حل میں سنجیدہ مسائل درپیش ہیں ، تو یہ ملاقات کویت یا عمان جیسے غیر جانبدار ملک میں ہونا چاہئے تھی،میڈل ایست مانیٹر نے آخر میں لکھا ہے  کہ قطر کا محاصرہ اٹھاے بغیر خلیج تعاون کونسل غیر موثر ہوگی اور پردے کے پیچھے ہونے والی بات چیت سے مسئلہ حل نہیں ہوگا ، حالانکہ قطر کےوزیر خارجہ یا وزیر اعظم کے امیر کی نیابت میں  ریاض کے اجلاس میں شریک ہوں گے،سوشل میڈیا پر امیر قطر کی شرکت کے بارے میں کی جانے والی قیاس آرائیوں کے بوجود اجلاس میں شریک ممالک کو ان کی آمد کی امید ہیں تھی تاکہ ایک بار قطر کو بحران حل نہ ہونے دینے کا ذمہ دار ٹھہرا سکیں ۔




0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین