پوتن بائیڈن کی جنیوا میٹنگ کا امریکہ روس تعلقات پر اثر

پچھلے ہفتے تک روس امریکہ تعلقات میں بحران کا عالم تھا جس کی وجہ سے مختلف عوامل پر تناؤ بڑھتا گیا اور یوکرین کے اوپر بحیرہ اسود میں واشنگٹن اور ماسکو کے مابین فوجی تصادم کی بات کی جارہی تھی ، لیکن جنیوا سربراہی اجلاس  نے بظاہر آگ پر پانی کا کام کیا ہے۔

ولایت پورٹل:ایرنا کی رپورٹ کے مطابق جو بائیڈن کی صدارت کے مختصر عرصے کے دوران روس اور امریکہ کے تعلقات میں بحران عروج پر پہنچ گیا اور بائیڈن کا پوتن کو قاتل کہنا دونوں ممالک کے سفیروں کی واپسی کا سبب بنا، روس پر نئی پابندیاں عائد کی گئیں جن میں سے کچھ واشنگٹن کے مطابق روس کے خلاف یورپی سفارتی جنگوں سے یکجہتی کی بنا پر ہیں، مشرقی یوکرین میں بڑھتی ہوئی کشیدگی کے ساتھ ساتھ ، بحیرہ اسود میں امریکی جنگی جہاز کی تعیناتی نے دونوں ممالک کو مسلح تنازعات کے دہانے پر کھڑا کردیا ۔
خراب تعلقات اتنے لامتناہی تھے کہ ماہرین نے پیش گوئی کی تھی کہ جنیوا میں دونوں ممالک کے رہنماؤں کی ملاقات کا اثر دونوں فریقوں کے مابین بحران کے شعلوں کو قابو کرنے میں کامیاب  نہیں  ہو پائے گا  لیکن توقعات کے برعکس پوتن اور بائیڈن نے چار گھنٹے کے جنیوا کے اجلاس سے مطمئن ہوکر باہر آئے،ان کا سب سے اہم فیصلہ اور معاہدہ دونوں ممالک کے سفیروں کی واشنگٹن اور ماسکو میں اپنی اپنی جگہوں پر واپسی تھا  جو بائیڈن  کے ذریعہ پوتن کو قاتل قراردیے جانے کے بعد اپنے عہدے چھوڑنے پر مجبور ہوگئے تھے۔

 دونوں فریقوں کے مطابق  دونوں ممالک اور ورکنگ گروپس کے مابین باضابطہ طور پر انتہائی اہم دو طرفہ امور پر تبادلہ خیال کیے جانے والے سفارتی تعاون کی سرگرمی کے بغیر ، پوزیشن واضح کرنا اور متنازعہ امور پر دیرپا بات چیت کرنا عملی طور پر ناممکن ہے،روس میں مبصرین کا خیال ہے کہ دونوں رہنماؤں نے تمام اختلافات کے باوجود صورتحال کو پرسکون کرنے کی کوشش کے لئے ملاقات کی، ایسی صورتحال کا اندازہ کیا گیا ہے جس کی سرد جنگ اور سن 2016 کے بعد سے بدترین تعلقات ہیں۔
تاہم  اب سوال یہ ہے کہ جنیوا سربراہی اجلاس میں پوتن بائیڈن معاہدے کے بعد ، کیا امریکہ روس تعلقات میں بحران کے طوفان پر قابو پایا جاسکتا ہے؟واضح رہے کہ روسی صدر ولادیمیر پوتن اور امریکی صدر جو بائیڈن نے 16 جون کو تقریبا چار گھنٹے گفتگو کی  دو گھنٹے آمنے سامنے اور دوسرے دو گھنٹے اپنے وفود کے ساتھ بات کی  جس کے بعد علیحدہ علیحدہ پریس کانفرنسوں میں انہوں نے ا س ملاقات کے نتائج کو بیان کیا، بائیڈن نے کہا کہ پوتن اور میری ایک بڑی ذمہ داری یہ ہےکہ اگر چہ ہمارے درمیان اختلافات ہیں  لیکن ہمارا مضبوط رشتہ ہونا چاہئے،میں نے پوتن سے کہا تھا کہ میرا کام روس کو نقصان پہنچانا نہیں ، بلکہ امریکی عوام کی حفاظت کرنا ہے، تاہم ، بائیڈن کے مطابق  انہوں نے روسی جیلوں میں الیکسی ناوالنی اور امریکی شہریوں کے خلاف بات کرتے ہوئے کہا کہ وہ ان کے حقوق کا دفاع کر رہے ہیں۔

0
شیئر کیجئے:
ہمیں فالو کریں
تازہ ترین